1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ایمن الظواہری کا نیا ویڈیو پیغام ، شام میں پر تشدد واقعات جاری

القاعدہ کے نئے سربراہ ایمن الظواہری نے حکومت مخالف شامی مظاہرین پر زور دیا ہے کہ وہ اپنی تحریک کو امریکہ اور اسرائیل کے خلاف بھی استعمال کریں۔ دوسری طرف شام میں حکومتی کریک ڈاؤن کے نتیجے میں 11 افراد ہلاک ہو گئے۔

default

ایمن الظواہری

دہشت گرد نیٹ ورک القاعدہ کے نئے سربراہ ایمن الظواہری کا یہ نیا ویڈیو پیغام بدھ کو ریلیز کیا گیا۔ اپنے پیغام میں اس دہشت گرد تنظیم کے سربراہ نے دعویٰ کیا ہے کہ امریکی حکومت شام میں حکومت مخالف مظاہرین کے ساتھ مخلص نہیں ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے بقول ایمن الظوہری نے اپنے اس نئے پیغام میں شامی باشندوں سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا ہے، ’امریکہ، جس نے صدر بشار الاسد کے اقتدار کے دوران اس سے تعاون کیا، دعویٰ کرتا ہے کہ وہ تمہارے ساتھ ہے۔ یہ اس نے ایسے وقت میں کہا، جب اس نے دیکھا کہ بشار الاسد تمہارے غصے کے زلزلے کے نتیجے میں لڑکھڑا گیا ہے‘۔

الظواہری نے مزید کہا کہ شام میں حکومت مخالف نہتے مظاہرین کو ٹینکوں اور بھاری اسلحہ کا سامنا ہے۔ ’’امریکہ اور صدر باراک اوباما کو بتا دو کہ تمہاری بغاوت اس وقت تک نہیں تھمے گی، جب تک تم اسرائیل کے خلاف مقدس جہاد میں کامیاب نہیں ہو جاؤ گے۔‘‘

Ayman al-Zawahri Osama bin Laden NO FLASH

اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد ایمن الظواہری القاعدہ کے نئے سربراہ چنا گیا ہے

سکیورٹی ماہرین کے بقول اس بات کے امکانات بہت کم ہیں کہ شام میں چار ماہ قبل شروع ہونے والے حکومت مخالف مظاہروں میں القاعدہ ملوث ہے۔ تاہم شامی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ پولیس اور فوج کی ہلاکتوں کے کچھ واقعات کو دیکھنے کے بعد معلوم ہوتا ہے کہ شاید دہشت گرد تنظیم القاعدہ اس تشدد شامل ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ جب سے شام میں مظاہرے شروع ہوئے ہیں، تب سے امریکہ مظاہرین پر کیے جانے والے حکومتی کریک ڈاؤن کی شدید مذمت کرتا آ رہا ہے۔ دوسری طرف بدھ کے دن ہی دارالحکومت دمشق کے نواح میں مظاہرین پر سیکورٹی فورسز کے کریک ڈاؤن کے نتیجے میں مزید گیارہ افراد کے ہلاک ہونے کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

انسانی حقوق کے ایک سرکردہ کارکن امر کروبی نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ بدھ کی صبح سکیورٹی فورسز نے گھروں میں گھس کر کارروائی کی، جس کے نتیجے میں گیارہ شہری مارے گئے جبکہ ڈھائی سو سے زائد کو گرفتار کر لیا گیا۔ کروبی کے بقول اس آپریشن کے دوران ٹینکوں کے علاوہ بکتر بند گاڑیاں بھی استعمال میں لائی گئیں۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس