1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایف بی آئی ہلیری کلنٹن پر فرد جرم عائد کرنے کی تجویز نہیں دے گی

امریکی سکیورٹی کے ادارے ایف بی آئی کے ڈائریکٹر جیمز کومی کا کہنا ہے کہ ہلیری کلنٹن کی بہ حیثیت وزیر خارجہ ذاتی ای میلز کے سرور کے استعمال پر ان کا ادارہ کسی مجرمانہ فرد جرم عائد کرنے کی تجویز کے خلاف ہے۔

ایف بی آئی کے سربراہ نے سابق خاتون اوّل اور ڈیموکریٹک پارٹی کی غیر حتمی صدارتی امیدوار ہلیری کلنٹن کی ای میلز کے تنازعے کے حوالے سے کہا ہے کہ گو کہ ہلیری اور ان کے ساتھیوں کی جانب سے ’’انتہائی غفلت برتنے‘‘ کے شواہد موجود ہیں تاہم یہ ثبوت نہیں مل سکا کہ انہوں نے ’کلاسیفائیڈ انفارمیشن‘ کے استعمال میں قانون شکنی کی کوشش کی ہو۔

کومی نے یہ بیان منگل کے روز ہلیری کلنٹن کی نجی ای میلز کے تنازعے پر ایف بی آئی کی تفتیشی رپورٹ سے مندرجات پیش کرتے ہوئے دیا۔

DW.COM

تاہم ایف بی آئی کی سفارشات کے باوجود ہلیری کلنٹن پر فرد جرم عائد کرنا یا نہ کرنے کا اختیار امریکی وزارت انصاف کے استغاثہ کو حاصل ہے۔ جیمز کومی کا بہرحال کہنا تھا کہ ایسے شواہد موجود نہیں ہیں جنہیں لے کر استغاثہ کوئی کارروائی کر سکے۔

ہلیری کلنٹن کے نجی ای میل سرور استعمال کرنے کے حوالے سے امریکا میں کافی عرصے سے گرما گرم بحث جاری ہے۔ یہاں تک کہ اس معاملے کے باعث ان کی ڈیموکریٹک پارٹی کی صدارتی امیدواری بھی خطرے میں پڑ سکتی ہے۔

ایف بی آئی کی تفتیشی رپورٹ کے مطابق ہلیری کی ایک سو تیرہ ای میلز، جو کلاسیفایئڈ انفارمیشن لیے ہوئے تھیں، نجی سرور سے نہیں بھیجی جانا چاہیے تھیں۔

کومی اس بارے میں کہتے ہیں، ’’ہلیری کلنٹن کی جگہ کوئی بھی سمجھ دار شخص، یا وہ افراد جو یہ ای میلز وصول کر رہے تھے، کو معلوم ہونا چاہیے تھا کہ اس طرح کی ای میلز کے تبادلے کے لیے نجی سرور کا استعمال نہیں کیا جانا چاہیے تھا۔‘‘

ایف بی آئی کے سربراہ مزید کہتے ہیں کہ چوں کہ ہلیری نے نجی سرور کا استعمال کیا، اس باعث غیر ملکی ایجنسیاں ان کی ای میلز ’ہیک‘ کر سکتی تھیں۔ بہرحال اس بات کے شواہد نہیں ملے کہ ان کی ای میلز کو ’ہیک‘ کیا گیا تھا۔

ہلیری کلنٹن نے سن دو ہزار چودہ میں ای میلز کا ایک بڑا حصہ اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے حوالے کیا تھا، تاہم تفتیش کاروں کا کہنا ہے کہ ہزاروں ای میلز اب بھی ان کے سامنے نہیں لائی گئیں۔ کومی کا اس بارے میں کہنا ہے کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ملا کہ یہ ای میلز پیش نہ کرنے کی وجہ معلومات کو مخفی رکھنا تھا۔

ملتے جلتے مندرجات