1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایردوآن کا امتحان، سولہ اپریل کا ریفرنڈم

ترکی میں سولہ اپریل کو ہونے والا ریفرنڈم ملکی دستور میں غیر معمولی اثرات کا حامل ہو گا۔ تقریباً ایک صدی قبل اتاترک کی قیادت میں قائم ہونے والی جدید ترک جمہوریہ کے دستور میں وسیع تر تبدیلیاں لائیں جائیں گی۔

ریفرنڈم میں کامیابی حاصل کرنے کی مہم میں ترک صدر نے عوام کو نئے ہوائی اڈے، ہسپتالوں اور تعلیمی اداروں کے قیام کے وعدے کیے ہیں۔ وہ اپنے ملک کی ورکنگ کلاس کو زیادہ سے زیادہ خوش کرنے کی کوشش میں ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ ایردوآن ترکی کی اکثریتی ورکنگ کلاس میں انتہائی مقبول ہیں۔

 ایروآن استنبول کی ایک جام لیکا پہاڑی پر ایک بڑی مسجد تعمبر کر رہے ہیں۔ اس مسجد کی تعمیر میں شہر کی مساجد کی تنظیم مالی مدد کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔ اس تنظیم کے صدر ارحین کولُونک کا کہنا ہے کہ پندرہ برس قبل جو ناممکن تھا، ایردوآن نے وہ ممکن کر دکھایا اور اُن کی شخصیت کا سب سے اہم پہلو یہ ہے کہ وہ ایک عام آدمی کے دل کو چھو لیتے ہیں۔

ریفرنڈم کی مہم کے دوران ترک عوام میں تقسیم دیکھی جا رہی ہے۔ ایسا خیال کیا گیا ہے کہ ایردوآن کو اس ریفرنڈم میں تاریخی کامیابی حاصل ہو سکتی ہے۔ یہ مہم ترکی سے باہر کئی ملکوں میں آباد ترک شہریوں تک پھیلانے کی کوشش ضرور کی گئی لیکن یورپ میں آسٹریا اور جرمنی کے انتظامی اقدامات نے رجب طیب ایردوآن کو ایسے خفا کر دیا کہ انہوں نے ان اقدامات کا موازنہ نازی دورِ حکومت کے ساتھ کر دیا۔

Türkei Erdogan wirft Deutschland «Nazi-Praktiken» vor (picture alliance/AA/M.Cetinmuhurdar )

ترک صدر ایردوآن ایک عوامی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے

اُن کے مخالفین کا خیال ہے کہ ایردوآن صدر کے منصب میں زیادہ سے زیادہ اختیارت حاصل کرنے کے جنون میں مبتلا ہیں اور یہ انجام کار آمریت کی صورت میں عوام کو برداشت کرنا پڑے گا۔ اُن کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایردوآن کو اپنے ہاتھ میں زیادہ سے زیادہ قوت جمع کرنے کا نشہ ہو گیا ہے اور یہ سلسلہ مصطفیٰ کمال اتاترک کی قیادت میں ایک صدی قبل قائم کی گئی سیکولر جمہوری ریاست کی بنیادوں کو ہلا کر رکھ دے گا۔ ناقدین کا یہ بھی کہنا ہے کہ جتنا عرصہ وہ اقتدار پر براجمان رہیں گے، وہ ترکی کو مغربی جمہوری اقدار سے دور لے جاتے جائیں گے۔

تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ ریفرنڈم کے اثرات صرف ترکی کے اندر محدود نہیں ہوں گے بلکہ کئی دوسرے ملکوں میں ان کا اثر محسوس کیا جائے گا۔ اس بات کا قوی امکان ہے کہ ایردوآن ایک طاقتور صدر کی حیثیت سے یورپی یونین کے ساتھ مہاجرین کو روکنے کی ڈیل پر کوئی بڑا فیصلہ کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ ترکی شامی تنازعے پر بھی اپنی حکمت عملی کو ازسرنو ترتیب دے سکتا ہے۔