1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایران کو جوہری ہتھیاروں سے دور کر دیا، اوباما

امریکی صدر باراک اوباما نے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے پر عمل درآمد کے آغاز کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایران کو ایٹمی ہتھیاروں سے دور کر دیا گیا اور یہ سفارت کاری کی کامیابی ہے۔

اتوار کے روز صدر اوباما نے اپنے خطاب میں کہا کہ ایران سے پانچ امریکی شہریوں کی رہائی امریکا کے لیے ایک اچھا دن ہے، ’’یہ ایک اچھا دن ہے، کیوں کہ امریکی شہری رہا ہوکر اپنے اہل خانہ سے ملنے والے ہیں۔‘‘

امریکی صدر نے یہ بیان ایک ایسے موقع پر دیا ہے، جب جولائی 2015ء میں ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان طے پانے والے جوہری معاہدے پر گزشتہ روز باقاعدہ عمل درآمد کا اعلان کر دیا گیا تھا۔ اس سے قبل بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے اپنی رپورٹ میں تصدیق کی کہ ایران نے جوہری معاہدے کے تحت اپنی جوہری سرگرمیوں کو محدود بنا دیا ہے۔

صدر اوباما نے تاہم واضح انداز میں کہا کہ امریکا اس جوہری معاہدے کی مسلسل نگرانی کرے گا، تاکہ تہران حکومت اس کی خلاف ورزی نہ کر سکے۔

صدر اوباما کے خطاب سے قبل امریکی محکمہ خزانہ نے ایرانی بلیسٹک میزائل پروگرام پر نئی امریکی پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔ ان پابندیوں کے تحت گیارہ افراد اور اداروں کو ایرانی میزائل پروگرام میں مدد کی بنیاد پر بلیک لسٹ میں شامل کر دیا گیا ہے۔

صدر اوباما نے کہا، ’’یہ ایک اچھا دن ہے کیوں کہ ہم نے ایک مرتبہ پھر دیکھا ہے کہ امریکا کی سفارتی طاقت کس قدر ہے۔ یہ چیزیں یاد دہانی ہیں کہ ہم اپنی طاقت اور فہم سے کس طرح دنیا کی قیادت کر سکتے ہیں۔‘‘

صدر اوباما نے مزید کہا، ’’جوہری ڈیل پر عمل درآمد کے آغاز اور امریکی شہریوں کی واپسی کی خوشی کے باوجود امریکا اور ایران کے درمیان گہرے اختلافات موجود ہیں۔‘‘