1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ایران نے یورینیم کی افزودگی میں اضافہ کر دیا

بین الاقوامی ایجنسی برائے جوہری توانائیIAEAنے جمعہ کے روز شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ ایران نے ایٹمی ری ایکٹروں میں یورینیم کی افزودگی میں اضافہ کر دیا ہے۔

default

ایران کا ایٹمی پروگرام عالمی برادری کے لئے پریشانی کا باعث

بین الاقوامی ایجسنی برائےجوہری توانائی IAEA نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ ایران میں یورینیم کی افزودگی کے لئے تقریبا پانچ ہزار سینٹری فیوجز استعمال ہو رہے ہیں اور اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو وہاں معائنے کے لئے مشکلات کا سامنا ہے۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ایران نے کم افزودہ یورینیم کو بھی پچھلے چھ ماہ میں پانچ سو کلو گرام سے تیرہ سو انتالیس کلوگرام تک بڑھا دیا ہے۔ ایران کا کہنا ہے کہ وہ پرامن مقاصد کے لئے اپنا جوہری پروگرام جاری رکھے گا اور یورینیم کی افزودی ملکی ضروریات کے لئے توانائی کے متبادل ذرائع کے طور پر جاری رہے گی۔

Iran Atom Präsident Mahmud Ahmadinedschad

ایرانی صدر احمدی نزاد کا کہنا ہے کہ ایرانی ایٹمی پروگرام پرامن مقاصد کے لئے ہے

امریکی ماہرین کا خیال ہے کہ ایران کے پاس اس وقت کم افزودہ یورینیم کی اتنی مقدار ضرور موجود ہے کہ وہ اس زیادہ افزودہ یورینیم کی تبدیل کر کے ایک ایٹم بم بنانے کی صلاحیت کے قریب ہے۔

ایران کا ایٹمی پروگرام ایک عرصے سے مبہم یا غیر واضح سمجھا جاتا ہے۔ تہران حکومت بارہا یہ یقین دلاتی رہی ہے کہ اس کا ایٹمی پروگرام سول مقاصد کے لئے ہے۔ دوسری جانب اس قسم کی قیاس آرائیوں میں اضافہ ہو رہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران ایٹمی ہتھیاروں کے حصول کے لئے کام کر رہا ہے۔

آئی اے ای اے کی یہ تازہ رپورٹ ایران میں آئی اے ای اے کے متعلقہ افسران، جو جوہری پروگرام کی معائنہ کاری کے فرائض انجام دے رہے ہیں، کے مشاہدات اور تجزئے کی بنیاد پر مرتب کی گئی ہے۔

مغربی ممالک کو یہ خدشہ لاحق ہے کہ ایران اپنے جوہری پروگرام سے ایٹمی ہتھیار تیار کرنے کی کوششوں میں ہے تاہم ایران ہمیشہ ہی ان الزمات کو رد کرتا آیا ہے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عاطف بلوچ