1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ایران میں جاسوسی کے شبے میں تیس افراد گرفتار

ایران کے سرکاری میڈیا نے بتایا ہے کہ امریکہ کے لیے جاسوسی کے شبے میں کم از کم تیس افراد کو سکیورٹی حکام نے حراست میں لے لیا ہے۔ یہ گرفتاریاں خفیہ اداروں کی رپورٹ پر کی گئی ہیں۔

default

ایرانی انٹیلیجنس منسٹری کے ایک اعلان میں واضح کیا گیا کہ ایران کے خفیہ اداروں کی تفتیش اور دوسری فورسز کی کارروائی کے دوران ایسے افراد کو گرفتار کیا گیا ہے، جو امریکہ کے لیے جاسوسی میں معاونت کر رہے تھے۔ ان میں ایران میں سرگرم امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کے ایجنٹ بھی شامل ہیں۔

ایرانی خفیہ اداروں کی جانب سے گرفتار شدگان کی ابتدائی نشاندہی کی گئی تھی۔ انٹیلیجنس منسٹری کے مطابق ان گرفتاریوں سے امریکہ کے لیے جاسوسی میں مصروف ایک بڑے نیٹ ورک کا صفایا کردیا گیا ہے۔ ایرانی خفیہ اداروں کی وزارت کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ نیٹ ورک کئی ملکوں میں ایک ساتھ ایران کی جاسوسی میں ملوث تھا۔

ایران کی نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی فارس کے مطابق مشتبہ افراد نے

Clotilde Reiss Gerichtshof Iran

ایرانی عدالت میں فرانسیسی خاتون Clotilde Reiss جاسوسی کے مقدمے کی سماعت کے دوران

ایران کے حساس معاملات بارے بنیادی اطلاعات ان امریکی ایجنٹوں کو فراہم کی ہیں، جو دوسرے ملکوں میں امریکی سفارت خانوں اور قونصلیٹ دفاتر میں تعینات ہیں۔ فارس کے مطابق ان ممالک میں ملائشیا، ترکی اور متحدہ عرب امارات شامل ہیں۔ ایرانی خبر رساں ادارے کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان ملکوں میں کل بیالیس اہلکاروں کا تعلق امریکی خفیہ اداروں سے ہے۔ یہ امریکی اہلکار ایران کے فضائی دفاع اور بائیو ٹیکنالوجی کے شعبوں کے بارے میں معلومات اکھٹی کرنے کے عمل میں مصروف تھے۔

ایران میں یہ گرفتاریاں امریکی صدر باراک اوباما کے مشرق وسطیٰ کے نئے تصور کے خد و خال سامنے آنے کے دو دن بعد کی گئی ہیں۔ اس خصوصی پالیسی بیان میں امریکی صدر نے اس سابقہ امریکی مؤقف کا اعادہ کیا تھا کہ ایران دہشت گردی کے فروغ میں مصروف ہونے کے ساتھ ساتھ جوہری ہتھیار سازی کا متمنی ہے۔

یہ امر اہم ہےکہ ایران اس سے قبل بھی امریکہ، برطانیہ اور اسرائیل کے لیے جاسوسی کرنے والے نیٹ ورک کے افراد کو حراست میں لینے کا اعلان کر چکا ہے۔ اسی سال جنوری میں بھی اسرائیلی خفیہ ادارے موساد کے لیے جاسوسی کے شبے میں کئی افراد کو گرفتار کیا گیا تھا۔ گزشتہ ماہ سول ڈیفینس شعبے کے سربراہ غلام رضا جلالی نے بتایا تھا کہ ایران کے اندر متحرک کمپیوٹر نظام پر انٹرنیٹ کے ذریعے ایک نئے وائرس سے اٹیک کیا گیا ہے، جس کا نشانہ اہم مقامات میں استعمال ہونے والے آلات کو ناکارہ کرنا تھا۔

ایران میں جاسوسی کا جرم ثابت ہونے پر عدالت کے حکم پر ملوث فرد کو موت کی سزا دی جاتی ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس