1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایران، میزائل کا تجربہ اور ایٹمی فیول راڈ

ایران نے آبنائے ہرمز میں اپنی فوجی مشقوں کے اختتامی مرحلے میں درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے اور زمین سے فضا میں فائر کیے جانے والے ایک ایسے میزائل کا تجربہ کیا ہے، جو کسی ریڈار کی گرفت میں آئے بغیر ہدف تک پہنچ سکتا ہے۔

فوجی مشقوں کا ایک منظر

فوجی مشقوں کا ایک منظر

ایرانی بحریہ کے ڈپٹی کمانڈر ایڈمرل محمود موسوی نے آج بتایا کہ ایران نے تارپیڈو کے بھی تجربات کیے ہیں۔ ایران اِن دَس روزہ فوجی مشقوں کے ذریعے ایران اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتا ہے۔ ان مشقوں کے آغاز پر ایران نے مغربی دُنیا کی جانب سے مزید پابندیوں کی صورت میں آبنائے ہرمز کو دیگر ملکوں کے بحری جہازوں کے لیے بند کرنے کی دھمکی دی تھی تاہم بعد میں تہران حکومت نے اپنے موقف میں نرمی کا عندیہ دیا اور یوں اِس بحران کی شدت میں اب کمی دیکھنے میں آ رہی ہے۔ اب ایران کا کہنا یہ ہے کہ مغربی ملکوں کی جارحیت کا جواب دینے کے لیے اُس کے پاس اور بھی راستے ہیں۔ ایران نے درمیانے فاصلے تک مار کرنے کی صلاحیت کے حامل ایک میزائل کا تجربہ کیا ہے، جو زمین سے فضا میں فائر کیا جاتا ہے۔

ایران نے اپنے ملک کے اندر فیول راڈز تیار کرنے کا دعویٰ کیا ہے

ایران نے اپنے ملک کے اندر فیول راڈز تیار کرنے کا دعویٰ کیا ہے

کل ہفتے کو امریکی صدر باراک اوباما نے دفاعی بجٹ کے اُس مسودے پر دستخط کر دیے، جس میں دیگر باتوں کے علاوہ ایران پر اُس کے ایٹمی پروگرام کی وجہ سے مزید پابندیوں کا ذکر کیا گیا ہے۔ آئندہ ایران کے مرکزی بینک کے ساتھ کاروباری روابط رکھنے والے غیر ملکی مالیاتی ادارے امریکہ میں سرگرم عمل نہیں ہو سکیں گے۔ تاہم اِس پابندی کا اطلاق اب سے چھ مہینے بعد شروع ہو گا۔

دریں اثناء ایران نے اعلان کیا ہے کہ اُس کے سائنسدان ایک ایٹمی فیول راڈ تیار کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ آج ایٹمی توانائی کے ایرانی ادارے کی وَیب سائٹ پر بتایا گیا ہے کہ اِس فیول راڈ کوتہران میں تحقیقی مقاصد کے لیے استعمال ہونے والے ایک ری ایکٹر میں نصب کر کے بھی دیکھا گیا ہے۔ آیا اِس فیول راڈ میں افزودہ یورینیم بھی موجود تھا یا یہ محض ایک تجربے کے لیے خالی استعمال کی گئی، یہ واضح نہیں ہو سکا ہے۔ مغربی دُنیا کو اس بارے میں شک و شبہ ہے کہ ایران فیول راڈز تیار کرنے کی صلاحیت کا حامل ہے۔ ایران کا کہنا ہے کہ چونکہ بین الاقوامی پابندیوں کے باعث وہ عالمی منڈی میں فیول راڈز نہیں خرید سکتا، اِس لیے اُسے یہ راڈز خود تیار کرنا پڑ رہی ہیں۔

ایرانی بحریہ ان مشقوں کے ذریعے اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتی ہے

ایرانی بحریہ ان مشقوں کے ذریعے اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتی ہے

اِدھر امریکہ اور اسرائیل ایران کے ایٹمی پروگرام پر پائے جانے والے تنازعے کا کوئی سفارتی حل سامنے نہ آنے کی صورت میں ایران کے خلاف فوجی کارروائی کو خارج از امکان قرار نہیں دے رہے۔ جہاں امریکہ نے پہلے ہی ایرانی تیل کی درآمدات پر پابندی عائد کر رکھی ہے، وہاں یورپی یونین بھی ایسی ہی پابندی عائد کرنے پر غور کر رہی ہے۔ ایسی کسی پابندی کے نتیجے میں ایران کو بہت زیادہ مالی نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے۔ غالباً اِسی وجہ سے ایران نے یورپی یونین کی خارجہ امور کی مندوبِ اعلیٰ کیتھرین ایشٹن کو ایک خط لکھنے کا اعلان کیا ہے اور اپنے ایٹمی پروگرام پر پھر سے مذاکرات کرنے پر آمادگی کا عندیہ دیا ہے۔

رپورٹ: خبر رساں ادارے / امجد علی

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس