1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایران سعودی عرب کا شکرگزار

ایرانی حکومت نے رواں برس حج کے بہتر انتظامات کرنے پر سعودی عرب کا شکریہ ادا کیا ہے۔ ایرانی حکومت کے مطابق اس سے ان دونوں ملکوں کے مابین مذاکرات کی بحالی کی راہ کافی حد تک ہموار ہوئی ہے۔

ایران کے سرکاری براڈکاسٹر کے مطابق ایران کے امورِ حج سے متعلق سرکاری ادارے کے سربراہ علی غازی عسکر نے کہا ہے، ’’ایرانی حجاج کے لیے سعودی حکومت نے جو نئی انتظامی سوچ اپنائی، اُس پر ہم سعودی عرب کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔‘‘

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اس سال 86 ہزار ایرانی شہریوں نے حج کیا۔ تاہم گزشتہ برس دونوں حکومتوں کے درمیان سکیورٹی معاملات پر مذاکرات ناکام ہونے کے بعد ایرانی شہری حج نہیں کر سکے تھے۔

سال 2015ء میں حج کے موقع پر بھگدڑ مچنے کے نتیجے میں قریب ڈھائی ہزار حجاج ہلاک ہو گئے تھے جن میں سینکڑوں ایرانی شہری بھی شامل تھے۔ ایران کی طرف سے اس واقعے کے بعد سعودی حکومت کے حج انتظامات پر شدید تنقید کی جاتی رہی ہے۔

ایرانی نیوز ایجنسی ISNA کے مطابق غازی عسکر کا مزید کہنا تھا، ’’ممالک کے درمیان ہمیشہ اختلافات پیدا ہوتے رہتے ہیں تاہم فریقین کے لیے اہم بات یہ ہے کہ ایسے اختلافات کو مکالمت اور مذاکرات کے ذریعے ہی حل کیا جائے۔‘‘ عسکر کا مزید کہنا تھا، ’’اس وقت، جب کامیابی سے حج مکمل ہو گیا ہے، بہت اچھا موقع ہے کہ دونوں فریق دیگر معاملات میں بھی اپنے باہمی مسائل کو حل کرنے کے لیے بات چیت کریں۔‘‘

ایران اور سعودی عرب کے درمیان سفارتی تعلقات جنوری 2016ء میں اس وقت منقطع ہو گئے تھے جب ریاض حکومت کی طرف سے ایک اہم شیعہ رہنما کو سزائے موت دیے جانے کے بعد تہران میں قائم سعودی سفارت خانے پر مشتعل ایرانیوں نے حملہ کر دیا تھا۔

Mohammed Dschawad Sarif (Getty Images/AFP/V. Oseledko)

محمد جواد ظریف

ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے بھی کہا ہے کہ اگر سعودی پالیسی میں واقعی مثبت تبدیلی پیدا ہوئی ہے تو ایران کی جانب سے بھی اس کا مثبت جواب ہی دیا جائے گا۔

DW.COM