1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایرانی جوہری سائنسداں کی ملک واپسی

ایران کے جوہری سائنسداں شاہرام امیری امریکہ سے واپس اپنے وطن روانہ ہوگئے ہیں۔ امیری 2009 ء میں سعودی عرب کے دورے کے دوران لاپتہ ہوگئے تھے۔

default

شاہرام امیری: ایرانی جوہری سائنسدان

تہران حکومت نے الزام لگا یا تھا کہ امیری کو سعودی عرب کے خفیہ ادارے نے امریکی انٹیلی جنس سروس سی آئی اے کے حوالے کیا تھا۔ گزشتہ پیرکوشاہرام امیری واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے میں قائم ’ ایران انٹرسٹ سیکشن‘ کے دفتر میں آئے۔ ایسو سی ایٹڈ پریس میں چھپنے والے پاکستانی سفارتخانے خانے کے ایک ترجمان کے بیان کے مطابق شاہرام امیری نے سفارتخانے میں یہ بیان دیا کہ انہیں اُن کے اغواکنندگان نے واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے میں قائم ’ ایران انٹرسٹ سیکشن‘ کے دفتر پہنچایا۔ واضح رہے کہ ایران اور امریکہ کے درمیان کسی قسم کے سفارتی تعلقات نہیں پائے جاتے ہیں اس لئے واشنگٹن میں تہران حکومت کی سفارتی نمائندگی پاکستان کرتا ہے۔ اسی لئے وہاں پاکستانی سفارتخانے میں ایران کے قونصل خانے کے کام کی انجام دہی کے لئے ’ ایران انٹرسٹ سیکشن‘ کا دفتر قائم ہے۔

Flash-Galerie geplante Städte USA Washington

امیری پیر کو واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے میں نمودار ہوئے

اطلاعات کے مطابق ایران کے سرکاری ٹیلی وژن نے منگل کواسی دفتر میں امیری کا انٹرویو کیا جو اُن کے تہران پہنچنے پر نشر کیا جائے گا۔ دریں اثناء ایرانی خبر رساں ادارے ارنا کو بیان دیتے ہوئے ایرانی وزارت خارجہ کے ایک ترجمان ’رامین مہمان پرست‘ نے کہا’ شاہرام امیری امریکی سرزمین چھوڑ کر ایران کی طرف پرواز کر چُکے ہیں اور یہ اسلامی جمہوریہ ایران اور واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے کی مشترکہ کوششوں سے ممکن ہوا ہے‘۔ انہوں نے مزید بتایا کہ امیری کو پہلے کسی تیسرے ملک پہنچایا جائے گا، جہاں سے وہ تہران کے لئے روانہ ہوں گے۔ ایران کے اس دعویٰ کے بارے میں کہ امیری کو امریکی خفیہ ادارے نے اغوا کیا تھا، مہمان پرست نے کہا ہے کہ اس معاملے کو تہران حکومت سفارتی اور قانونی طور پر آگے بڑھائے گی۔

USA Außenministerin Hillary Rodham Clinton in Washington

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن

اُدھر منگل کو امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے اس امر کی تصدیق کی تھی کہ ایرانی جوہری سائنسدان واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے کے زیر نگرانی کام کرنے والے ’ ایران انٹرسٹ سیکشن‘ کے دفتر میں ہیں۔ کلنٹن نے اپنے بیان میں کہا’ امیری اپنی مرضی سے امریکہ آئے تھے اور اپنی مرضی سے ہی واپس اپنے وطن جاسکتے ہیں۔ اُن پر کوئی پابندی نہیں اور وہ فیصلہ خود کر سکتے ہیں۔ دریں اثناء اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ایک ترجمان ’فلپ کرولی‘ نے واشنگٹن حکام کے شاہرام امیری کے ساتھ رابطے کی تصدیق کی ہے۔ اُن کے بقول ’ امیری کچھ عرصے سے یہاں تھے، میں یہ نہیں بتاؤں گا کہ وہ کب سے امریکہ میں تھے، تاہم انہوں نے واپس اپنے ملک جانے کا فیصلہ کر لیا ہے‘۔ اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان نے اس بارے میں کسی قسم کی تفصیلات بتانے سے انکار کر دیا کہ ’ آیا ایرانی جوہری سائنسدان نے امریکہ کو کوئی خفیہ معلومات فراہم کی ہیں‘۔

2009 ء میں سعودی عرب سے لاپتہ ہونے والے ایرانی جوہری سائنسدان تہران کی ’ملک اشتر یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی‘ کے ساتھ منسلک تھے۔ اس ادارے کو ایران کے ’ایلیٹ ریوولوشنری گارڈ‘ پاسداران انقلاب سے قریب تصورکیا جاتا ہے، جس کے متعدد کمانڈرز اور کمپنیاں اقوام متحدہ کی پابندیوں کا نشانہ بنے ہوئے ہیں۔

شاہرام امیری نے منگل کو ایرانی ٹیلی وژن چینل کو واشنگٹن میں ایک انٹرویو دیتے ہوئے کہا ’ میرے اغوا کی کہانی طویل ہے اس کی تفصیلات میں اُس وقت منظر عام پر لاؤں گا جب میں با امید خدا اپنے ملک پہنچ جاؤں گا‘۔ ایرانی چینل کی انگریزی ویب سائٹ پر امیری کے بیانات شائع ہوئے ہیں، جس میں امیری نے کہا’ میں وطن پہنچنے پر اپنے میڈیا اور ہم وطنوں کو اطمینان اور سکون سے گزشتہ 14مہینوں کے پراسرار واقعات کی تفصیلات سے آگاہ کروں گا۔ میں ایران میں اُن تمام الزامات کی وضاحت پبش کروں گا، جو غیر ملکی میڈیا اور امریکی حکومت نے مجھ پر عائد کئے ہیں۔ یہ سب مجھے بدنام کرنے کے لئے کیا گیا‘۔

NO FLASH Iran Atomkraftwerk Nuklearanlage Kernkraftwerk Reaktor

ایران کا ایٹمی پروگرام ایک عرصے سے عالمی سطح پر نزع کا باعث بنا ہوا ہے

شاہرام امیری کی وطن واپسی کے پیچھے کار فرما عوامل کے بارے میں مختلف خبریں سامنے آ رہی ہیں۔ چند خبر رساں اداروں کے مطابق امریکہ نے حال ہی میں عراق سے ملحقہ ایران کے سرحدی علاقے سے گرفتار کئے جانے والے تین امریکی سیاحوں کی رہائی کے سلسلے میں تہران کے ساتھ مذاکرات کئے۔ ان امریکی باشندوں کو ایران کی سرحد میں در اندازی کے الزام میں ایرانی حکام نے گرفتار کیا تھا۔ ذرائع کے مطابق ایرانی جوہری سائسدان شاہرام امیری کی وطن واپسی ایران میں گرفتار ہونے والے تین امریکی سیاہوں کے بدلے میں ممکن ہوئی۔ تاہم اس کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادرات: عدنان اسحاق

DW.COM