1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایرانی جنگی بحری جہاز نہر سوئز میں داخل

ایران کے دو جنگی بحری جہاز نہر سوئز میں داخل ہو گئے ہیں۔ بظاہر تربیتی مقاصد کے لیے شام جانے والے ان بحری جہازوں کے مصر میں نہرسوئز کے راستے بحیرہء روم بھیجے جانے کے ایرانی منصوبے پر اسرائیل نے شدید تشویش ظاہر کی ہے۔

default

ایران میں سن 1979ء کے اسلامی انقلاب کے بعد سے پہلی مرتبہ ایرانی جنگی بحری جہاز اس راستے سے شام کی طرف جا رہے ہیں۔ اسرائیلی حکام نے مشرق وسطیٰ کی موجودہ صورتحال کے تناظر میں ایران کے اس قدم کو خطے میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی ایک کوشش قرار دیا ہے۔ اسرائیلی وزیر خارجہ نے کہا کہ ان جنگی جہازوں کا یہ سفر ایران کی طرف سے اشتعال انگیزی اور علاقے میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی ایک نئی کاوش ہے۔

بتایا گیا ہے کہ یہ جنگی بحری جہاز منگل کو عالمی وقت کے مطابق صبح تین بج کر 35 منٹ پر نہر سوئز کے پانیوں میں داخل ہوئے۔ اپنی منزل تک پہنچنے میں ان جہازوں کو بارہ سے چودہ گھنٹے تک کا وقت درکار ہوگا۔ خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق امریکہ ان ایرانی بحری جہازوں کی نقل وحرکت پر کڑی نظر رکھے گا۔

Suezkanal in Ägypten Containerschiff

نہر سوئز کا ایک منظر

مصر کی سرکاری خبر رساں ایجنسی مینا کے مطابق مصری حکام نے ان جہازوں کو نہر سوئز سے گزرنے کی اجازت ایران کی طرف سے اِس یقین دہانی کے بعد دی کہ اِن پر کوئی ہتھیار، تابکاری مواد یا کیمیکلز موجود نہیں ہوں گے۔ یہ دونوں بحری جہاز 70ءکی دہائی میں برطانیہ میں تیار کیے گئے تھے، جو اسلامی انقلاب سے قبل ایران کے حوالے کر دیے گئے تھے۔

اس معاملے میں اسرائیل کی طرف سے اس لیے بھی شدید ردعمل سامنے آیا ہے کہ ایران اسرائیل کو بطور ایک ریاست تسلیم نہیں کرتا اور مغربی ممالک کو خدشہ ہے کہ تہران اپنے جوہری پروگرام سے ایٹمی ہتھیاروں کے حصول کی کوششوں میں جتا ہوا ہے۔ تاہم ایران کا کہنا ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پر امن مقاصد کے لیے ہے اور وہ اس سے کسی بھی قسم کے کوئی ایٹمی ہتھیار حاصل کرنے کی کوشش میں نہیں ہے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: مقبول ملک

DW.COM