1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایران:کلنٹن برازیلہ کی حمایت حاصل کرنے میں ناکام

امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن اپنے دورہ برازیل میں ایران مخالف پابندیوں کے لئے برازیلہ کی حمایت حاصل کرنے میں ناکام رہی ہیں۔

default

کلنٹن کے مطابق ایران پر پابندیاں عائد کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں

بدھ کے روز ہلیری کلنٹن نے برازیلی صدر لوئز لولا ڈِسلوا سے ملاقات کے بعد اپنے ایک بیان میں کہا کہ ایران اس وقت تک اپنے جوہری پروگرام کے حوالے سے سنجیدہ مذاکرات پر آمادہ نہیں ہوگا، جب تک اس کے خلاف سخت ترین پابندیاں عائد نہیں کی جاتیں۔

برازیلی صدر لولا ڈِسلوا نے ہلیری کلنٹن سے ملاقات سے قبل کہا تھا کہ ایران کے خلاف پابندیاں عائد کرنا اور ایران کو تنہا کرنا اس موقع پر ہرگز دانشمندانہ قدم نہیں ہوگا۔ ان کے مطابق ایران کو ہرصورت میں مذاکرات کی میز تک لانے کی کوشش کی جانی چاہئے۔

امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن ایران پر سلامتی کونسل کی پابندیوں کی حمایت حاصل کرنے برازیل پہنچی تھیں۔ کلنٹن نے بدھ کے روز اپنے بیان میں کہا کہ امریکہ کے نزدیک پابندیاں ہی وہ راستہ ہیں، جس کے ذریعے ہتھیاروں کی دوڑ کا خاتمہ ممکن ہے اور صرف اسی طریقے سے تیل کی منڈیوں میں امن اور استحکام پیدا کیا جا سکتا ہے۔

Brasilien Präsident Lula da Silva

برازیل پابندیاں کے بجائے مذاکرات کی حمایت کر رہا ہے

گو کہ ایران پر پابندیاں عائد کرنے کے حوالے سے اس وقت امریکہ کی زیادہ تر توجہ روس اور چین پر مرکوز ہے، جنہیں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ایران پر پابندیوں کے حوالے سے پیش کی جانے والی کسی ممکنہ قرار داد کی صورت ویٹو کا حق حاصل ہے۔ اس کے علاوہ امریکی انتظامیہ سلامتی کونسل کے غیر مستقل اراکین ممالک کی حمایت کے حصول کی کوششوں میں بھی مصروف ہے، جن میں برازیل اور ترکی شامل ہیں۔

برازیل جس نے تہران کے ساتھ قریبی تعلقات قائم کر کے مغربی دنیا کو پہلے ہی تشویش میں مبتلا کر دیا تھا، اب پابندیوں کے خلاف آواز اٹھا کر اس تشویش میں مزید اضافے کا باعث بھی بنا ہے۔

برازیلی صدر نے اپنے بیان میں کہا کہ برازیل، عالمی برادری کے تہران سے مذاکرات کی بھرپور حمایت کرتا ہے تاہم تہران کو اس آڑ میں جوہری ہتھیاروں کے حصول کی کوشش نہیں کرنی چاہئے اور برازیل اس سلسلے میں اس کی حمایت نہیں کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ جوہری پروگرام کے بارے میں گزشتہ برس مئی میں ان کے دورہ تہران کے دوران ایرانی صدر سے ان کی تفصیلی بات چیت ہوئی تھی۔

Luiz Inacio Lula da Silva mit Mahmoud Ahmadinejad in Brasilien

برازیل کے ایران کے ساتھ قریبی تعلقات پر امریکہ کو خاصی تشویش ہے

برازیلی وزیرخارجہ سیلسو امورِم نے بھی ہلیری کلنٹن کے ساتھ مذاکرات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس میں برازیلی موقف کی نمائندگی کرتے ہوئے کہا کہ برازیلہ کے خیال میں اب بھی ایران کو مذاکرات کے ذریعے جوہری تنازعے کے حل پر آمادہ کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ فریقین لچک کا مظاہرہ کر کے مسئلے کے حل تک پہنچ سکتے ہیں۔

اس موقع پر کلنٹن کے کہا کہ ایران کے ساتھ اب تک ہونے والے تمام مذاکرات بے نتیجہ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تہران سے لوگ چین، ترکی اور برازیل جا کر مختلف لوگوں کو مخلتف چیزیں بتا رہے ہیں تاکہ ایران پر عالمی پابندیاں عائد نہیں ہوسکیں۔

دوسری جانب امریکہ اور یورپی یونین نے عالمی جوہری ایجنسی کو مطلع کئے بغیر مختلف سائٹس میں یورینیم کی افزودگی میں اضافے کو اشتعال انگیز قدم قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ اس اقدام سے تہران مزید سخت پابندیوں کی راہ ہموار کر رہا ہے۔

ویانہ میں ایران کے جوہری پروگرام کے حوالے سے بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کے ہیڈکوارٹرز میں بورڈ آف گورنرز کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں چین نےکہا کہ ایران پر پابندیاں عائد کرنے کا یہ صحیح وقت نہیں ہے۔

خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق سفارتکار پہلے ہی ایران پر پابندیوں کا مسودہ مرتب کرچکے ہیں، جس کے ذریعے ایران کو دباؤ میں لایا جاسکے گا کہ وہ جوہری ہتھیاروں کی تیاری سے باز رہے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عدنان اسحاق

ملتے جلتے مندرجات