1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

ایجادات و اختراعات: رواں سال کا یورپی ایوارڈ

سال رواں کے یورپی انوینٹرز ایوارڈز کی خصوصی تقریب انیس مئی کو ہنگری کے دارالحکومت بوڈاپیسٹ میں اکیڈمی برائے سائنسز کی میزبانی میں منعقد کی جائے گی۔ یورپ میں سائنسی ایجادات سے متعلق یہ انتہائی اہم انعام تصور کیا جاتا ہے۔

default

گزشتہ سال منعقد ہونے والی EPO ایوارڈز کی تقسیم کی تقریب، فائل فوٹو

یورپی انوینٹرز ایوارڈز کو عام طور پر ای پی او (EPO)کہا جاتا ہے۔ اس کی کل چار کیٹگریز ہیں اور ان میں صنعت اور ریسرچ نمایاں ہیں۔ غیر یورپی سائنسی محققین بھی اس میں شامل ہوتے ہبں۔ اس سلسلے میں پندرہ مختلف ایجادات یا سائنسی اختراعات کو شامل کیا گیا ہے۔ بنیادی طور پر ایسی ایجادات کو پرائز کے لیے منتخب کرنے میں اولیت دی جاتی ہے، جن کے انسانی زندگیوں میں استعمال اور افادیت کو اہمیت حاصل ہوتی ہے۔ یہ تمام ایجادات یا اختراعات یورپ کے پیٹنٹ دفتر میں رجسٹر بھی کروائی جاتی ہیں۔ پیٹنٹ دفتر میں کوئی بھی ادارہ یا شخص کسی بھی شے کو اپنے نام سے رجسرڈ کروا کر اس کے استعمال کے حق کو محفوظ کرتا ہے۔

یورپی پیٹنٹ دفتر جرمن شہر میونخ میں واقع ہے اور اس کی جانب سے کل پندرہ خصوصی ایجادات کو شارٹ لسٹ کیا گیا ہے۔ ان میں خاص طور پر نظر کی وہ عینک بھی شامل ہے، جو پہننے والے کی نظر کو خود ہی اوپر نیچے کر کے ایڈجسٹ کرتی ہے۔ اس عینک کو برطانیہ کی شہرہ آفاق آکسفور یونیورسٹی کے ماہر طبعیات جوشوا سلور نے دریافت کیا ہے۔ ہزاروں افراد نے یہ عینکیں استعمال کرنا شروع کر دی ہیں۔ ان عینکوں کو سردست غریب ملکوں میں متعارف کروایا گیا ہے۔ نظر کی اس عینک کو پروگریسو لینزز کی نئی جنریشن قرار دیا گیا ہے۔ عالمی ادارہٴ صحت کے مطابق اس وقت دنیا میں بصارت سے محرومی کی ایک بڑی وجہ نظر کی کمزوری کی غیر مناسب پیمائش ہے۔ امید کی جا رہی ہے کہ اس سال کا بہترین انعام جوشوا سلور حاصل کر سکتے ہیں۔ سلور کی دریافت کو کلیدی تحقیقی کیٹگری میں رکھا گیا ہے۔

European Inventor Award 2010 Albert Markendorf Raimund Loser Flash

گزشتہ برس EPO ایوارڈزکے لیے نامزد کردہ دو ماہرین آلبرٹ مارکنڈورف اور رائمنڈ لوزر، فائل فوٹو

جوشوا سلور کو سب سے سخت مقابلہ ایسٹونیا کے مارٹن مِن کی کاوش سے ہو گا، جنہوں نے بجلی کے انتہائی معمولی استعمال سےعارضہٴ قلب کی تشخیص کا نیا طریقہ دریافت کیا ہے، جو بہت معاون ثابت ہوگا۔ اس کے علاوہ ریسرچ کیٹگری میں سلورکا مقابلہ بیلجیئم کی خاتون سائنسدان کرسٹینے فان بروک ہون کی ایلز ہائمر کے علاج کے لیے تیار کی جانے والی دوا سے بھی ہے۔ خاتون سائنسدان کی دوا کو انسان کے دماغی عارضے کے علاج میں ایک بریک تھرو میڈیسن یا انقلابی دوا قرار دیا جا رہا ہے۔ انونٹرز ایوارڈز کے لیے حتمی فہرست میں شامل کی گئی اختراعات میں مصنوعی ڈینچر یا بتیسی میں ٹائیٹینئم کی دھات کا استعمال بھی شامل ہے۔ اس کا استعمال دانتوں کے روٹ کینال کے درمیان ہو گا اور اس کی وجہ سے دانتوں کے ڈاکٹر بعد میں دانتوں کی پوزیشن کو حسب ضرورت تبدیل کر سکیں گے۔

اس کے علاوہ چیک جمہوریہ کی خاتون طبی ریسرچر بلانکا ریحوا کا کینسر کے مریضوں کے لیے کیمو تھراپی کے نیا طریقہ کار بھی ایجادات و اختراعات کی اِس فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔ اس کے استعمال سے انسانی بدن کے صحت مند خلیوں کے غیر ضروری خاتمے کا امکان انتہائی کم ہو سکے گا۔

بوڈاپیسٹ کی تقریب میں سویڈن کے نامور سائنسدان Per-Ingvar Branemnark کو لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ دیا جائے گا۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس