1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایتھوپیا کا مسافر طیارہ تباہ، نوے افراد ہلاک

پیر کو علی الصبح ایتھوپیا کا ایک مسافر طیارہ بحیرہء روم کے پانیوں میں گر کر تباہ ہو گیا۔ اس طیارے میں عملے کے ارکان کے علاوہ 90 مسافر بھی سوار تھے۔ امدادی کارروائیاں جاری ہیں اور ابھی تک اٹھارہ لاشیں برآمدکی جاچکی ہیں۔

default

ہلاک شدگان کے رشتہ دار بیروت ہوائی اڈے پر

اس حادثے کے بارے میں بیروت سے ملنے والی اوّلین رپورٹوں میں بتایا گیا کہ ایتھوپین ایئر لائنز کا یہ طیارہ لبنانی دارالحکومت کے بین الاقوامی ہوائی اڈے سے پرواز کے کچھ ہی دیر بعد ریڈار اسکرین سے غائب ہو گیا اور اس کا کنٹرول ٹاور سے رابطہ بھی منقطع ہو گیا تھا۔

لبنانی سول ایوی ایشن حکام نے یہ تصدیق کر دی ہے کہ یہ طیارہ بحیرہء روم کے علاقے میں گر کر تباہ ہو گیا اور اس میں سوار عملے کے ارکان اور مسافروں سمیت کل نوے کے قریب افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

خبر ایجنسی روئٹرز کے مطابق بیروت ایئر پورٹ کے ذرائع نے بعد ازاں بتایا کہ بوئنگ 737 طرز کا یہ ہوائی جہاز ٹیک آف کے صرف پانچ منٹ بعد ہی ریڈار سے غائب ہو گیا تھا۔ اس میں سوار مسافروں میں سے پچاس کے قریب لبنانی شہری بتائے گئے ہیں، باقی ماندہ مسافروں میں سے اکثریت ایتھوپیا کے شہریوں کی تھی جبکہ فوری طور پر عملے کے ارکان کی غیر مصدقہ تعداد سات بتائی گئی ہے۔

طے شدہ نظام الاوقات کے مطابق اس طیارے کو صبح تین بج کر دس منٹ پر بیروت سے روانہ ہونا تھا اور ایتھوپین ایئر لائنز کی ویب سائٹ کے مطابق یہ پرواز بیروت سے ایتھوپیا کے دارالحکومت ادیس ابابا جاتی ہے جو پیر کی صبح اپنے طے شدہ وقت میں معمولی سی تاخیر کے بعد روانہ ہوئی اور ٹیک آف کے بعد فضا میں اس جہاز کا رخ بیروت سے جنوب مغرب کی طرف تھا۔

خود ایتھوپین ایئر لائنز نے فوری طور پر اس حادثے کے بارے میں کوئی بھی مؤقف اختیار کرنے سے احتراز کیا۔

یہ طیارہ اتوار کی رات ہی ادیس ابابا سے بیروت پہنچا تھا۔ اس حادثے کی اطلاع ملتے ہی لبنان میں سول ایوی ایشن اور دیگر شعبوں کے اعلیٰ حکام بیروت کے رفیق حریری انٹرنیشنل ایئر پورٹ پر پہنچ گئے۔

Libanon Flugzeugabsturz Rettungsaktion vor der Küste

ہیلی کاپٹر اور بحری جہاز امدادی کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کی مغربی یورپی وقت کے مطابق پیر کی صبح چار بجے تک ملنے والی رپورٹوں میں بتایا گیا کہ لبنان کے ساحلی علاقے کے رہنے والے چند مقامی افراد نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ انہوں نے ایک ایسے ہوائی جہاز کو سمندر میں کریش ہوتے ہوئے دیکھا جسے آگ لگی ہوئی تھی۔

جرمن خبر ایجنسی DPA نے بیروت ایئر پورٹ کے ایک اعلیٰ اہلکار کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ یہ مسافر طیارہ بیروت سے پندرہ کلومیٹر جنوب کی طرف سعدیات کے مقام پر کریش ہوا اور اس سانحے کی ممکنہ وجوہات میں خراب موسم بھی ایک اہم وجہ ہو سکتی ہے۔

لبنان میں رہائش پذیر ایسے ایتھوپین باشندو‌ں کی تعداد سینکڑوں میں بنتی ہے جو وہاں گھریلو ملازمین کے طور پر کام کرتے ہیں اور ایتھوپین ایئر لائنز کی براہ راست پروازوں کی وجہ سے اپنے وطن واپسی کے لئے بیروت کا بین الاقوامی ہوائی اڈہ استعمال کرتے ہیں۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: ندیم گِل

DW.COM