1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

اکہتر کی جنگ: بنگلہ دیش جنگی جرائم کی عدالت سے رجوع کرے گا

انیس سو اکہتر کی ’جنگِ آزادی‘ سے متعلق بنگلہ دیش کے وفاقی وزیر اے بی تجل السلام نے جرمن پریس ایجنسی کو بتایا ہے کہ بنگلہ دیش اکہتر کی جنگ کے پاکستانی ملزمان کو سزا دلوانے کے لیے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ سے رجوع کرے گا۔

default

بائیں جانب بیٹھے بھارتی لیفٹننٹ جنرل جگجیت سنگھ اروڑا اور دائیں جانب بیٹھے پاکستانی جنرل نیازی اکہتر کی جنگ میں پاکستانی فوج کے ہتھیار ڈالنے کے معاہدے پر دستخط کرتےہوئے

بنگلہ دیش کا موقف ہے کہ انیس سو اکہتر کی جنگ کے پاکستانی ملزمان بنگلہ دیش میں موجود نہیں ہیں لہٰذا اس معاملے پر بین الاقوامی مدد کی ضرورت ہے۔

Unabhängikeitsfeier in Bangladesh

بنگلہ دیش کے بانی شیخ مجیب الرحمان کی قبر پر ایک بچّہ پھول چڑھاتے ہوئے


واضح رہے کہ انیس سو اکہتر سے قبل بنگلہ دیش پاکستان کا مشرقی حصّہ تھا جہاں چلنے والی تحریک کو پاکستان علیحدگی پسند تحریک جب کہ بنگلہ دیش تحریکِ آزادی قرار دیتا ہے۔ اس تحریک کے مرکزی رہنما شیخ مجیب الرحمان نے اس حوالے سے پاکستانی فوج اوراس وقت کی قیادت پر بنگالیوں کی نسل کشی کا الزام عائد کیا تھا جس کی پاکستان میں اکہتر کے بعد کی حکومتیں اور فوج تردید کرتی رہی ہے۔

Machtkampf in Pakistan

افواجِ پاکستان کے سابق سربراہ ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرّف اکہتر کی جنگ پر ’اظہارِ افسوس‘ کرچکے ہیں جس کو بنگلہ دیش نے ناکافی قرار دیا تھا

بنگلہ دیش کی حکومتوں کا یہ موقف رہا ہے کہ پاکستانی پارلیمان اکہتر کے واقعات پر بنگلہ دیشی قوم سے معافی مانگے۔ سابق پاکستانی صدر اور سابق آرمی چیف پرویز مشرّف اس حوالے سے ایک بار ’اظہارِ افسوس‘ کرچکے ہیں جس کو بنگلہ دیش ناکافی قرار دیتا ہے۔ غیر جانبدار تاریخ دان اس جنگ کے دوران ہلاک ہونے والے بنگالیوں کی تعداد کم از کم تیس لاکھ بتاتے ہیں۔

بنگلہ دیش کی وزارتِ داخلہ اس معاملے کو حتمی شکل دینے کے لیے بدھ کے روز ایک اجلاس منعقد کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ جنگ کے دوران نوّے ہزار پاکستانی فوجیوں کو جنگی قیدی بنا لیا گیا تھا جن کو بعد میں بھٹّو کی حکومت میں آزاد کروالیا گیا تھا۔ بنگلہ دیش پاکستانی جنگی ملزمین کی تفتقش کے لیے اقوام ِ متحدہ سے بھی باضابطہ طور پر رجوع کرچکی ہے۔