1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

اٹلی میں عدم اعتماد کا ووٹ، بیرلسکونی کا امتحان

اطالوی پارلیمنٹ میں عدم اعتماد کا ووٹ آج ہو رہا ہے۔ اسے وزیر اعظم سیلویو بیرلسکونی کی پیپل آف فریڈم پارٹی کے لئے ایک اتحادی دھڑے کے علیٰحدہ ہونے کے بعد ایوان میں اکثریت دکھانے کا پہلا امتحان قرار دیا جا رہا ہے۔

default

عدم اعتماد کے ووٹ کو ایک ممکنہ نئی سیاسی قوت کے قیام کا محرک بھی قرار دیا جا رہا ہے۔ تاہم گزشتہ ہفتے وزیر اعظم بیرلسکونی سے علیحٰدگی اختیار کرنے والے وزراء نے اس میں شریک نہ ہونے کا اعلان کیا ہے۔

اسپیکر اسمبلی گیانفرانوکو فِنی نے گزشتہ جمعہ کو بیرلسکونی کے ساتھ 16برس کا اتحاد ختم کرتے ہوئے فیوچر اینڈ فریڈم فار اٹلی نامی جماعت کی بنیاد رکھی۔ اس جماعت کے ذرائع کا کہنا ہے کہ عدم اعتماد ووٹ میں حصہ نہ لینے کے لئے معاہدہ ہوا ہے۔

عدم اعتماد کا یہ ووٹ اٹلی کے جونیئر وزیر جاکومو کالینڈو پر اختیارات کے مبینہ ناجائز استعمال میں ملوث ہونے پر رکھا گیا ہے۔ فِنی بیرلسکونی کے ساتھ پیپل آف فریڈم جماعت کی بنیاد رکھنے والوں میں شامل رہے ہیں۔ وہ اور ان کے حامی بیرلسکونی کی حکومت میں شامل اعلیٰ وزراء کی جانب سے مبینہ طور پر بدعنوانی کے اسکینڈلز میں ملوث ہونے پر آواز اٹھاتے رہے ہیں۔

اس حوالے سے تفتیش کے بعد حالیہ مہینوں میں دو وزراء جبکہ ایک جونیئر وزیر عہدہ چھوڑ چکے ہیں۔ تاہم عدم اعتماد کا ووٹ ناکام رہا تو بیرلسکونی کو انتخابات منعقد کرانے کے لئے اپنا وعدہ پورا کرنے کی ضرورت نہیں رہے گی۔

Silvio Berlusconi Flash-Galerie

ان انتخابات کو وزیراعظم بیرلسکونی کے لئے ایک بڑا امتحان قرار دیا جا رہا ہے

فِنی کی جماعت میں ایوانِ زیریں کے 33 اور ایوانِ بالا کے دس ارکان شامل ہیں۔ انہیں اپوزیشن پارٹی سینٹرسٹ یونین اور دیگر آزاد پارلیمنٹری گروپوں کی حمایت بھی حاصل ہے۔ یوں عدم اعتماد ووٹ میں شامل نہ ہونے کا اعلان کرنے والوں کی تعداد 85 ہے۔ اٹلی میں سیاسی حلقوں کا کہنا ہے کہ یہ گروپ پیپل آف فریڈم اور ڈیموکریٹک پارٹی کے بعد تیسری سیاسی قوت بن سکتا ہے۔

ان اتحادیوں کے علیحٰدہ ہونے سے قبل بیرلسکونی کی مخلوط حکومت میں 630 رکنی پارلیمنٹ میں 342 ارکان شامل تھے۔ دوسری جانب ایوان بالا میں بیرلسکونی کو فِنی کے حامیوں کے علیٰحدہ ہونے کے باوجود مناسب اکثریت حاصل ہے۔

رپورٹ : ندیم گِل

ادارت : عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس