1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اٹلی میں تارکین وطن کی آمد، ہنگامی حالت کا اعلان

روم حکومت نے تقریباً تین ہزار تارکین وطن کی اچانک ملک آمد پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ اٹلی آنے والے ان تارکین وطن میں سے زیادہ تر کا تعلق تیونس سے ہے۔

default

لامپیڈوسا کا ساحلی علاقہ

تیونس میں 14 جنوری کو سابق صدر زین العابدین بن علی کی معزولی کے بعد سے پائی جانے والی افراتفری اور شورش کے سبب عوام مسائل کا شکار ہیں۔ اس بحران سے تنگ آکر یورپی ملک اٹلی کا رُخ کرنے والے یہ لوگ چھوٹے بحری جہازوں کے ذریعے اٹلی کے ساحل کی طرف بڑھنا شروع ہوئے، جنہیں کوسٹ گارڈز نے راستے میں ہی روک لیا۔

اطالوی کوسٹ گارڈز کے سخت پہرے کے باوجود حکام کا کہنا ہے کہ گزشتہ تین روز کے اندر تیونس کے تین ہزار باشندے لامپیڈوسا کے ساحل تک پہنچ چُکے ہیں اور اس جگہ ایک ایمرجنسی کی سی صورتحال پیدا ہو گئی ہے۔

Migranten Lampedusa

لامپیڈوسا کے ساحل پر ایک عرصے سے تارکین وطن غیر قانونی طور پر اٹلی میں داخل ہونے کی کوشش کرتے رہتے ہیں

جزیرہ لامپیڈوسا اٹلی کے بڑے خُشک خطے سے کافی دور اور شمالی افریقہ سے نزدیک واقع ہے۔ دریں اثناء تیونس سے آنے والے ان تارکین وطن کو کشتیوں اور جہازوں کے ذریعے سِسلی اور دیگر جنوب اطالوی شہروں کے حراستی مراکز منتقل کرنے کا کام شروع کر دیا گیا ہے۔ اس طرح غیر قانوتی طور پر اٹلی آنے والے ان تارکین وطن کی شناخت کے بارے میں چھان بین کی جا رہی ہے۔

گزشتہ جمعہ کو اٹلی کے وزیر داخلہ روبرٹو مارونی نے کہا تھا کہ اس وقت اس بات کے خدشات بہت زیادہ بڑھے ہوئے ہیں کہ القاعدہ کے حامی اور دیگر شرپسند عناصر بھی تیونس سمیت دیگر افریقی اور عرب ممالک میں پائے جانے والے سیاسی بحران اور عدم استحکام کی صورتحال سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے یورپ کی طرف کوچ کرنے والے ان قافلوں میں شامل ہوکر یورپی سرزمین تک پہنچنے کی کوشش کریں۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس