1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

اٹلی: افریقی مہاجرین امدادی کارروائیوں میں آگے آگے

سیاسی پناہ کے متلاشی افریقی تارکین وطن  کے ایک گروپ نے اٹلی میں برفانی تودے کی زد میں آئے ایک ہوٹل کے لیے جاری امدادی کارروائیوں میں رضاکارانہ طور پر شمولیت اختیار کی ہے۔

Italien Hotel Rigopiano Rettunsgarbeiten nach Lawine (Reuters/Soccorso Alpino Speleologico Lazio/Handout)

ان مہاجرین نے علاقے میں آنے والے شدید زلزلے کے بعد امدادی کاروائیوں میں بطور رضا کار حصہ لینے کی پیشکش کی تھی

اِن نوجوان تارکینِ وطن کا تعلق افریقی ممالک سینیگال اور گنی سے ہے اور یہ پہلے بھی اٹلی کے شہر تورین میں  امدادی کاموں میں حصہ لیتے رہے ہیں ۔ اِن مہاجرین نے گزشتہ بدھ کے روز علاقے میں آنے والے شدید زلزلے کے بعد امدادی کاروائیوں میں بطور رضا کار حصہ لینے کی پیشکش کی تھی۔

 اس زلزلے کے نتیجے میں علاقے میں واقع ’ریگو پیانو‘ نامی ہوٹل پر برفانی تودہ گرا تھا جس کے بعد سے شدید برف باری کے باعث امدادی کاموں میں دقت پیش آ رہی ہے۔ عالمی امدادی تنظیم ریڈ کراس کی ترجمان اینسا دے آلے زاندرو نے بتایا کہ اِن تارکینِ وطن نوجوانوں نے اُن سے امدادی کاموں میں حصہ لینے کی درخواست کی تھی۔

دے آلے زاندرو کا کہنا تھا،’’ یہ افریقی مہاجرین دو سال سے ریڈ کراس کے ساتھ رضاکارانہ طور پر کام کر رہے ہیں اور رسد کے کاموں میں ماہر ہیں۔ ہم امدادی ٹیموں کے لیے برفانی تودے سے تباہ ہونے والے مقام پر ایک عارضی کیمپ قائم کر رہے ہیں جہاں وہ آرام کر سکیں اور اپنی تھکن اتار سکیں۔‘‘

Italien Hotel Rigopiano Rettunsgarbeiten nach Lawine (Reuters/Vigili del Fuoco/Handout)

  زلزلے کے نتیجے میں علاقے میں واقع ’ریگو پیانو‘ نامی ہوٹل پر برفانی تودہ گرا تھا جس کے بعد سے شدید برف باری کے باعث امدادی کاموں میں دقت پیش آ رہی ہے

 ریڈ کراس کی ترجمان کا کہنا تھا کہ افریقی تارکینِ وطن رضا کار لڑکے عارضی کیمپ میں شفٹوں میں کام کریں گے اور کھانا پکانے سمیت مختلف کاموں میں مدد دیں گے۔

گنی کے ایک پناہ گزین بیس سالہ مہاجر لڑکے نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا،’’ صورتِ حال مشکل ہے۔ یہ پہلا موقع ہو گا جب ہم کسی ایسی کارروائی میں حصہ لیں گے۔ ہم غیر ملکی ہیں اور اتنی سردی کے عادی بھی نہیں۔ لیکن ہم جہاں تک ممکن ہو گا متاثرہ افراد کی مدد ضرور کریں گے کیونکہ انسانوں کے کام آنا بہت اچھی بات ہے۔‘‘

اٹلی آنے والے بیشتر تارکینِ وطن کا تعلق شمالی افریقی ممالک سے ہے جو خطرناک زمینی سفر کر نے کے بعد یا پھر بحیرہ روم عبور کرکے یہاں پہنچے ہیں۔ سمندر کے ذریعے اٹلی پہنچنا بھی کم خطرناک نہیں۔ مہاجرین کی کشتیوں میں گنجائش سے زیادہ افراد سوار ہونے کے باعث اِن کے اُلٹنے کے واقعات پیش آتے رہے ہیں جن میں ہزاروں جانوں کا ضیاع بھی ہوا۔  

 

DW.COM