1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اُڑی حملہ : گرفتار ہونے والے دو بے گناہ لڑکے گھر واپس

بھارت ميں اُڑی کے مقام پر گزشتہ برس ہونے والے دہشت گردانہ حملے کے سلسلے ميں زیر حراست دو پاکستانی طالب علم کئی ماہ حراست ميں رہنے کے بعد آج اپنے اہل خانہ سے مل رہے ہيں۔ تازہ اطلاعات کے مطابق وہ لاہور پہنچ گئے ہيں۔

پاکستان کے زير انتظام کشمير کے علاقے پوٹھ جنڈگراں کے رہائشی فيصل حسين اعوان اور مظفرآباد کی تحصيل ہٹياں بالا سے تعلق رکھنے والے احسن خورشيد کئی ماہ بھارت ميں  قيد میں رہنے کے بعد آج اپنے اہل خانہ سے دوبارہ مل رہے ہيں۔ ان دونوں پاکستانی طالب علموں کو بھارتی نيشنل انويسٹيگيشن ايجنسی کی تفتيش کے بعد رہا کيا گيا جس ميں ايجنسی نے مقامی عدالت کو مطلع کيا تھا کہ اڑی حملے ميں ان کے ملوث  ہونے کے کوئی شواہد موجود نہيں۔ دونوں اسکول کے ساتھيوں کے آبائی علاقوں ميں آج جمعہ جشن کا سا سماں ہے اور ان کی آمد کے سلسلے ميں تيارياں جاری ہيں۔

فيصل اور حسين کو بھارتی فوج نے گزشتہ برس اکيس ستمبر کو اس وقت گرفتار کیا تھا، جب وہ غلطی سے پاک بھارت سرحد پر لائن آف کنٹرول عبور کر کے بھارتی حدود ميں چلے گئے تھے۔ حسين اور فيصل کی گرفتاری سے تين روز قبل اٹھارہ ستمبر کو اڑی کے مقام پر قائم بھارتی بيس پر شدت پسندوں کے حملے ميں انيس فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔ ان دونوں طلباء کو جيش محمد نامی کالعدم تنظيم کے ارکان ہونے کے شبے ميں گرفتار کيا گيا تھا۔ تاہم کئی ماہ تک جاری رہنے والی تفتيش کے بعد پچھلے ہفتے بدھ کو بھارتی نيشنل انويسٹيگيشن ايجنسی نے مقامی عدالت کو بتايا کہ ان کے خلاف کوئی ثبوت نہيں اور انہيں رہا کيا جا رہا ہے۔

دونوں پاکستانی طلباء کو وطن واپسی کے ليے پہلے بھارتی فوج کے حوالے کر ديا گيا ہے اور پاکستانی و بھارتی ڈی جی ايم اوز کی بذريعہ ٹيلی فون ہونے والی گفتگو ميں پاکستانی اہلکار کو مطلع کيا گيا تھا کہ حسين اور فيصل کو جمعے دس مارچ کو  واہگا بارڈر پر پاکستانی حکام کے حوالے کر ديا جائے گا۔ تازہ اطلاعات کے مطابق دونوں اب پاکستانی حدود ميں داخل ہو چکے ہيں اور لاہور پہنچ چکے ہيں۔

فيصل حسين اعوان کے بھائی غلام مصطفیٰ تبسم نے مقامی ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چيت کرتے ہوئے بتايا کے دونوں دوستوں کے اہل خانہ ان سے ملنے کے ليے بے چين ہيں اور بڑی ہی بے تابی سے ان کا انتظار جاری ہے۔ انہوں نے مزيد کہا، ’’ميں آپ کو يہ کيسے بتاؤں کہ ہمارے ليے اپنی والدہ کو روزانہ اشک بار اور دوائی کا اثر ختم ہونے کے بعد راتوں کو چيختے چلاتے ديکھنا کتنا کٹھن تھا۔‘‘ فيصل حسين اعوان اور احسن خورشيد کے اہل خانہ نے ان دونوں بے گناہوں  کی رہائی  ميں مدد کے ليے حکومت پاکستان اور مقامی ميڈيا کا شکريہ ادا کيا۔