1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اُردن: مسلح افراد کی فائرنگ، ایک سیاح سمیت سات ہلاک

اُردن کے ایک سیاحتی مقام پر مسلح افراد کی فائرنگ سے ایک کینیڈین سیاح سمیت سات افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ سکیورٹی فورسز ابھی تک نامعلوم حملہ آوروں کی تلاش میں مصروف ہیں۔

یہ واقعہ دارالحکومت عمان سے جنوب کی جانب ایک سو بیس کلومیٹر کے مقام پر واقع شہر الکرک کے مقام پر پیش آیا، جو سیاحوں میں بہت مقبول ہے اور اپنے صدیوں پرانے قلعوں کے لیے مشہور ہے۔

اُردن کے جنرل سکیورٹی ڈیپارٹمنٹ نے بتایا ہے کہ فائرنگ کے تبادلے کے متعدد واقعات میں چار پولیس اہلکار، کینیڈا سے تعلق رکھنے والی ایک سیاح خاتون اور اردن کے دو شہری ہلاک جبکہ متعدد افراد زخمی ہو گئے۔ اس ڈیپارٹمنٹ کے مطابق پہلا واقعہ اُس وقت پیش آیا، جب پولیس کی ایک گشتی گاڑی کرک میں ایک گھر میں لگی آگ کی جانچ کے لیے گئی۔

اس ڈیپارٹمنٹ کے ایک بیان کے مطابق ’جیسے ہی یہ اہلکار اُس علاقے میں پہنچے، اُس گھر کے باہر موجود نامعلوم حملہ آوروں نے گشتی گاڑی پر فائرنگ شروع کر دی، جس سے ایک پولیس اہلکار زخمی ہو گیا جبکہ حملہ آور ایک کار میں بیٹھ کر فرار ہو گئے‘۔ اس کے بعد ان حملہ آوروں نے پولیس کی ایک اور گاڑی پر فائرنگ کی لیکن اُس کے نتیجے میں کسی کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔

Jordanien Polizisten und kanadische Touristin bei Angriff in Kerak getötet (Reuters/M. Hamed)

حملہ آور قلعے کی بالائی منزلوں پر ہیں جبکہ قلعے کے نچلے حصے میں کچھ لوگ پھنسے ہوئے ہیں

اُسی دوران کرُوسیڈر قلعے میں مورچہ بند مسلح افراد نے کرک پولیس اسٹیشن پر فائرنگ شروع کر دی، جس کے باعث متعدد پولیس اہلکار اور راہگیر زخمی ہو گئے، جنہیں فوری طور پر ہسپتال پہنچا دیا گیا۔ حکام کے مطابق، ’پولیس اور سکیورٹی فورسز نے قلعے کا محاصرہ کر لیا ہے اور حملہ آوروں کی تلاش کے لیے آپریشن شروع کر دیا ہے‘۔

ایک سینیئر پولیس اہلکار کے مطابق حملہ آور قلعے کی بالائی منزلوں پر ہیں جبکہ قلعے کے نچلے حصے میں کچھ لوگ پھنسے ہوئے ہیں لیکن یہ لوگ خود ہی خوف کے باعث باہر نہیں نکل رہے اور یہ کہ میڈیا میں آنے والی یہ رپورٹیں غلط ہیں کہ اُنہیں یرغمال بنا لیا گیا ہے۔

جنرل سکیورٹی ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے حملہ آوروں کی تعداد پانچ یا چھ بتائی گئی ہے۔ یہ بات معلوم نہیں ہو سکی ہے کہ حملہ آور کون ہیں اور اُن کے محرکات کیا ہیں۔