1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ايرانی صدر کا دورہ فرانس، اہم اقتصادی پيش رفت متوقع

ايرانی صدر حسن روحانی يورپی رياست اٹلی ميں کئی بلين ڈالر ماليت کے درجنوں معاہدوں کو حتمی شکل دينے کے بعد آج بروز بدھ فرانس روانہ ہو رہے ہیں، جہاں وہ مزيد کاروباری معاہدوں پر دستخط کريں گے۔

امکان ظاہر کيا جا رہا ہے کہ حسن روحانی اپنے فرانس کے دورے ميں ايرانی مسافر بردار طياروں کی پرانی ہوتی ہوئی فلِيٹ ميں بہتری کے ليے ايئر بس کے 114 طياروں کی خريداری سے متعلق ايک اہم معاہدے کو حتمی شکل ديں گے۔ اس کے علاوہ موٹر گاڑياں بنانے والی فرانسيسی کمپنيوں پيجو اور رينالٹ کے ساتھ بھی ڈيلز متوقع ہيں۔

ايران کے متنازعہ جوہری پروگرام کے تناظر ميں عائد کردہ مغربی پابنديوں کے حاليہ خاتمے کے بعد ان دنوں تہران حکومت بين الاقوامی سطح پر دوبارہ اپنا مقام بنانے کی کوششوں ميں ہے۔ يہی وجہ ہے کہ ايرانی صدر متعدد وزراء، اعلیٰ اہلکاروں اور کاروباری افراد کے تقريباً ايک سو ارکان پر مشتمل ايک مضبوط وفد کے ہمراہ يورپی رياستوں کا دورہ کر رہے ہيں۔

اطلاعات ہيں کہ ايرانی صدر روحانی بدھ ستائيس جنوری کی سہ پہر تک فرانسيسی دارالحکومت پيرس پہنچيں گے۔ ان کی اپنے فرانسيسی ہم منصب فرانسوا اولانڈ کے ساتھ ملاقات جمعرات کے دن طے ہے۔ بعد ازاں دونوں صدور ايک مشترکہ پريس کانفرنس سے خطاب کريں گے۔ اٹھائيس جنوری کے روز ہی وہ فرانس کے کاروباری شعبے سے تعلق رکھنے والے افراد کے ساتھ اپنی ملاقاتوں ميں کئی معاہدوں کو حتمی شکل ديں گے۔

حسن روحانی کے دورہ يورپ سے قبل ايرانی وزير برائے ٹرانسپورٹ عباس اخوندی نے گزشتہ اتوار کے روز ايئر بس کے ساتھ 114 ہوائی جہازوں کے ايک بڑے معاہدے کا اعلان کيا تھا۔ مقامی ذرائع ابلاغ پر نشر کردہ رپورٹوں کے مطابق يہ معاہدہ ايئر بس اور ايران ايئر کے مابين طے پائے گا اور اسے روحانی کے دورہ پيرس کے موقع پر حتمی شکل دی جائے گی۔

ايرانی صدر نے اٹلی ميں سترہ بلين يورو ماليت کے معاہدوں کو حتمی شکل دی

ايرانی صدر نے اٹلی ميں سترہ بلين يورو ماليت کے معاہدوں کو حتمی شکل دی

يورپ روانگی سے قبل حسن روحانی نے خود بھی ايران اور فرانس کے درميان اقتصادی منصوبوں کا ذکر کيا تھا۔ پير کے روز اپنے ايک بيان ميں انہوں نے ايرانی ايوی ايشن اور آٹو موٹيو سيکٹروں ميں وسعت کا عنديہ ديا تھا۔

يہ امر اہم ہے کہ جنوری سن 2012 ميں بين الاقوامی پابنديوں کے نفاذ سے قبل فرانس کا شمار ايران کے اہم ترين اقتصادی پارٹنرز ميں ہوا کرتا تھا۔ ان دنوں يہ دونوں ممالک باہمی اقتصادی تعلقات کو دوبارہ پٹری پر لانےکی کوششوں ميں ہيں۔ پابنديوں کے خاتمے کے بعد ايرانی منڈيوں تک رسائی کے ليے مقابلے کی فضا بھی آج کل کافی گرم ہے۔

اطالوی اہلکاروں کے مطابق اٹلی کے اپنے دو روزہ دورے پر ايرانی صدر نے تقريبا سترہ بلين يورو ماليت کے معاہدوں کو حتمی شکل دی۔