1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ايتھوپيا اور صوماليہ کے درجنوں مہاجرين ہلاک

صوماليہ کے خود مختار حصے صومالی لينڈ سے متصل سمندری حدود ميں ايتھوپيا اور صوماليہ کے درجنوں مہاجرين اس وقت ہلاک ہو گئے جب ان کی کشتی تکنيکی خرابی کے سبب گہرے سمندر ميں چلی گئی۔

اس حادثے کے بارے ميں صومالی لينڈ کے ايک اہلکار نے بتايا ہے۔ سناگ خطے کے ايک اعلیٰ اہلکار احمد عبدی فالے نے بتايا کہ مہاجرين جس کشتی پر سوار تھے اُس نے اپنا سفر دو ہفتوں قبل بوساسو سے شروع کيا تھا اور وہ جزيرہ نما عرب ميں کسی نا معلوم مقام کی جانب گامزن تھی۔ بعد ازاں جب يہ کشتی صومالی لينڈ کے کوسٹ گارڈز کو ملی، تو اُس ميں موجود افراد کی حالت تشويش ناک تھی۔ ميادھ نامی شہر سے بات کرتے ہوئے احمد عبدی فالے نے بتايا کہ کشتی ميں دس افراد کی لاشيں مليں جبکہ بہتر ديگر افراد کافی بد حال تھے، جن ميں کچھ کی حالت نازک تھی۔

اعلیٰ اہلکار احمد عبدی فالے نے بتايا کہ کوسٹ گارڈز نے مُردوں کی تدفين کا انتظام کيا اور نڈھال اور مریضوں جیسی حالت والے افراد کو ہسپتال تک پہنچايا، جن کا علاج ابھی بھی جاری ہے۔ بعد ازاں جمعے کے روز ساحل سمندر پر مقامی لوگوں کو اِسی کشتی پر سوار 96 ديگر افراد کی بھی لاشيں مليں، جو لہروں کے ساتھ بہتی ہوئی ساحل تک پہنچيں تھيں۔ اطلاعات کے مطابق کشتی پر سوار اکثريتی تارکين وطن صوماليہ سے تھے۔

حادثے کا شکار ہونے والی اِس کشتی کے عملے کے تين ارکان کو حراست ميں لے ليا گيا ہے۔ حکام کے مطابق اُن سے تفتيش کا عمل تاحال شروع نہيں ہوا ہے۔ تينوں افراد قريبی پہاڑی علاقے ميں فرار ہونے کی کوششوں ميں تھے، جب انہيں گرفتار کر ليا گيا۔

قرن افريقہ کی رياستوں سے تعلق رکھنے والے تارکين وطن سالہا سال سے ايسے خطرناک سفر طے کرتے رہے ہيں۔ اپنے آبائی ممالک ميں ظلم و ستم، تشدد اور بد امنی سے پناہ حاصل کرنے اور بہتر زندگی کی تلاش ميں يہ تارکين وطن ديگر ملکوں تک پہنچنے کی کوشش کرتے ہيں۔ يہ امر اہم ہے کہ مشرقی افريقی ملکوں سے تعلق رکھنے والے اِن مہاجرين کے ليے يمن کے راستے خليجی ملکوں تک پہنچنے کے ليے صوماليہ ايک اہم گزر گاہ کی حيثيت رکھتا ہے۔

ملتے جلتے مندرجات