1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

اوباما کے بعد واشنگٹن اور یروشلم کے تعلقات

باراک اوباما کے منصب صدارت پر براجمان ہونے کے بعد سے عالمی دنیا میں سب سے زیادہ نگاہ امریکی کی خارجہ پالیسیوں میں متوقع تبدیلی کے حوالے سے ہے۔ امریکہ اوراسرائیل کے تعلقات کے حوالے سے پیٹر پیلپ کا لکھا تبصرہ:

default

باراک اوباما کے اقتدار میں آنے کے بعد سے واشنگٹن اور یروشلم کے مابین بات چیت کا لہجہ بدل گیا ہے۔ نئی امریکی حکومت کے عہدیداروں نے اسرائیل کو یقین دلایا ہے کہ امریکی اسرائیلی تعلقات میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔

اسرائیل سے امریکی توقعات میں دو باتوں پر سب سے زیادہ توجہ دی جارہی ہے۔ غزہ پٹی کے علاقے میں حالیہ جنگ کے اثرات کا ازالہ اور فلسطینیوں کے ساتھ قیام امن کی ٹھوس کوششوں کی بحالی کے لئے تیاریاں۔ جارج مچل پہلے ہی یہ اعلان کرچکے ہیں کہ وہ باقاعدگی سے خطے کے دورے کرتے رہیں گے اور ہوسکتا ہے کہ یروشلم میں اپنا ایک علاقائی ہیڈکوارٹڑ بھی قائم کرلیں۔

Obama in Israel - Besuch in Grenzstadt Sderot

اپنی صدارتی مہم کے دوران اوباما، اسرائیلی وزیر خارجہ زیپی لیونی کے ہمراہ

اسرائیلی فلسطینی تنازعے میں جارج مچل سب سے پہلے مغربی اردن کے علاقے میں یہودی بستیوں کے معاملے پر توجہ دینا چاہتے ہیں۔ اسی سلسلے میں جارج مچل اور نئی امریکی انتظامیہ کے دیگر عہدیدار بھی اسرائیل پر یہ واضح کرچکے ہیں کہ اگر اس نے ان بستیوں سے متعلق اپنی سیاست جاری رکھی تو وہ امن کوششوں کے لئے بڑی رکاوٹ بنی رہے گی۔ یہی بات اسرائیلی حکومت کی بار بار کی سیاسی ضمانتوں کی نفی بھی کرتی ہے۔

جارج مچل پر اب تک واضح ہو چکا ہوگا کہ اسرائیل کو اس کی یہودی بستیوں میں توسیع کی سیاست سے باز رکھنا کوئی آسان کام نہیں ہوگا۔ اس کے لئے انہیں اب اور بھی زیادہ محنت اس وجہ سے بھی کرنا ہوگی کہ اسرائیل میں دس فروری کے الیکشن کے بعد بھی وہاں سیاسی طاقت کی تقسیم بہت واضح نہیں ہے۔

دوسرا سب سے اہم موضوع غزہ پٹی کی تعمیر نو اور وہاں معمول کے حالات زندگی کی بحالی ہے۔ واشنگٹن اگلے ہفتہ کے اوائل میں مصر میں فلسطینی خود مختار انتظامیہ کو مالی امداد فراہم کرنے والے ملکوں اور اداروں کی کانفرنس سے پہلے ہی یہ اعلان کر چکا ہے کہ وہ فلسطینیو‌ں کی مدد کرتے ہوئے 900 ملین ڈالر مہیا کرے گا۔ ساتھ ہی امریکہ نے یورپی ملکوں کی طرف سے بھی فلسطینیوں کی مالی امداد کے لئے ایسے ہی وعدوں کی توقع ظاہر کی ہے۔ اہم بات یہ بھی ہے کہ امریکہ اور یورپی ملکوں نے اسرائیل پر یہ کہتے ہوئے کھلی تنقید بھی کی ہے کہ یہ امر ناقابل قبول ہے کہ دنیا فلسطینی علاقوں میں بنیادی ڈھانچے کی تعمیر وترقی کے لئے مدد کرتی رہے اور اسرائیل اگلے مسلح تنازعے میں یہ سارا ڈھانچہ پھر تباہ کردے۔

US Sondergesandter George Mitchell in Israel

امریکہ کے خصوصی مندوب برائے مشرق وسطیٰ جارج مچل اور اسرائیلی رہنما نیتن یاہو

اسرائیل پر امریکہ اس وجہ سے بھی شدید تنقید کررہا ہے کہ وہ غزہ پٹی کے علاقے میں سول آبادی کو بنیادی اشیائے ضرورت کی فراہمی میں بھی مسلسل رکاوٹیں ڈال رہا ہے حالانکہ غزہ پٹی کے عوام کو اس طرح اجتماعی طور پر سزا دینے کی کوششوں کی نہ تو اجازت دی جاسکتی ہے اور نہ ہی ان سے کوئی فائدہ ہوگا۔

جارج مچل علاقائی سطح پر قیام امن کی کوششیں نئے سرے سے شروع کرنا چاہتے ہیں۔ اسی لئے وہ ترکی کو دوبارہ اسرائیل اور شام کے مابین ثالثی کی بھر پور کاوشوں پر بھی آمادہ کرنا چاہتے ہیں۔ ساتھ ہی اس تاثر کو بھی نظر انداز نہیں کیا جاسکتا کہ واشنگٹن یروشلم سے ٹھوس اقدامات کی توقع بھی کرتا ہے۔