1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

اوباما کے انتخاب پرمشرقِ وسطیٰ میں ردِ عمل

نئے صدر کے طور پرباراک اوباما کے انتخاب کے بعد اپنے اولین رد عمل میں، مشرق وسطیٰ میں، اسرائیل اور ایران نے ان تنازعات کا بھی ذکر کیا جو ایک طویل عرصے سے حل طلب ہیں۔

default

مشرقِ وسطیٰ میں اوباما کے انتخاب پر ملا جلا ردِ عمل دیکھنے میں آیا ہے

امریکی عوام باراک اوباما کی صورت میں دنیا کی واحد سپر پاورکے نئے اور پہلے سیاہ فام صدر کا انتخاب کرچکے ہیں۔ باراک اوباما کی ذات سے خود امریکہ کے علاوہ دنیا بھر میں بہت سی توقعات وابستہ کی جارہی ہیں۔ اسی لئے امریکی سینیٹ کے اس رکن کے نئے صدر کے طور پرانتخاب کے بعد اپنے اولین رد عمل میں، مشرق وسطیٰ میں، اسرائیل اور ایران نے ان تنازعات کا بھی ذکر کیا جو ایک طویل عرصے سے حل طلب ہیں۔

Keine Ruhe in Gaza

مسئلہ فلسطین کے حل کے لیے کیا اوباما جارج بش سے مختلف ثابت ہوں گے؟

امریکی صدارتی الیکشن کے دن مشرق وسطیٰ کے خطے میں یہ دیکھنے میں آیا کہ اسرائیلی فوج نے غزہ پٹی کے علاقے میں گھس کر کئی فلسطینیوں کو ہلاک کردیا جو،خود اسرائیل کے بقول،مبینہ طور پر اُس کے فوجیوں کو اغواء کرنے کی تیاریاں کررہے تھے۔ پھر چند ہی لمحوں بعد، جون میں حماس کی طرف سے اعلان کردہ جنگ بندی کے بعد پہلی مرتبہ،جنوبی اسرائیل پر قسام طرز کے درجنوں راکٹ فائرکئے گئے۔ تہران میں ایک سرکاری ترجمان نے امریکہ کو خبردار کیا کہ وہ ایران پر حملے کے اپنے ارادوں سے باز رہے، کیونکہ اس روز امریکی جنگی ہیلی کاپٹر عراقی ایرانی سرحد کے خطرناک حد تک قریب پہنچ گئے تھے۔

Iran Atom Präsident Mahmud Ahmadinedschad

اپنی انتخابی مہم میں باراک اوباما نے ایرانی قیادت کے ساتھ بات چیت پر زور دیا تھا

اس کے علاوہ اسرائیل میں یہ سوال بھی پوچھا جانے لگا کہ باراک اوباما کی کامیابی کے بعد کیا وائٹ ہاؤس کی طرف سے اسرائیل کی مکمل اور تقریباﹰ غیر مشروط حمائت کا دور ختم ہوجائے گا۔ پھر اس بات پر عدم اطمینان کا اظہار بھی کیا گیا کہ باراک اوباما، جیسا کہ وہ کہہ بھی چکے ہیں، ایران کے بارے میں قطعی طور پر نئی سیاسی پالیسی اپنا سکتے ہیں۔

باراک اوباما کی فتح کے بعد ایران سے ملکی پارلیمان کے سابق اسپیکر کے ذریعے یہ سننے کو ملا کہ امریکہ میں نئی سیاسی تبدیلی کا اعلان اس امر کا اعتراف ہے کہ جارج ڈبلیو بُش کی سیاست غلط تھی اور اب اوباما کو اپنا وعدہ پورا کرنا ہوگا۔

Irak USA Reaktionen Wahl Obama Zeitung in Bagdad

ایک عراقی شخص اوباما کی فتح کی خبر پڑھتے ہوئے۔ عراق میں اس بات کی امید کی جا رہی ہے کہ اوباما امریکی صدر کی حیثیت سے عراق سے امریکی افواج کا جلد انخلاء ممکن بنائیں گے۔

جہاں تک شام کا تعلق ہے تو امریکی انتخابات سے قبل ہی شامی وزیر اطلاعات محسن بلال نے اپنے ایک انٹرویو میں یہ کہا تھا کہ دمشق امریکہ میں بڑی تبدیلی کی توقع کرتا ہے جبکہ فلسطینی صدر محمود عباس نے اوباما کی جیت کا خیرمقدم کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ نئے امریکی صدر خطے میں قیام امن کے عمل کو اُس کے مثبت انجام تک پہنچانے میں کامیاب رہیں گے۔ اس کے برعکس حماس نے محض کسی بھی امید پسندی کا اظہار کرنے کی بجائے یہ کہا کہ واشنگٹن میں کچھ بھی تبدیل نہیں ہوگا۔

بات اگر عراق کی کی جائے تو بغداد میں بھی، امریکی صدارتی انتخابات اور سیاہ فام اوباما کی جیت کے بعد کسی بہت بڑی تبدیلی کی توقع نہیں کی جارہی۔ مثلاﹰاپنی انتخابی مہم کے دوران باراک اوباما کا یہ اعلان کہ وہ اٹھارہ ماہ کے اندر اندر عراق سے امریکی فوجی دستے واپس بلا لیں گے، اس بارے میں دیکھا جائے تو صدر اوباما کے لئے وہ سب کچھ بروقت کرسکنا اتنا آسان نہیں ہوگا جو کچھ انہوں نے صدارتی امیدوار کے طور پر کہا تھا۔