1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’اوباما دلائی لامہ سے ملاقات نہ کریں‘، چین

چین کی طرف سے انتباہ کے باوجود امریکی صدر باراک اوباما آج ہفتہ 16 جولائی کو واشنگٹن میں تبتیوں کے روحانی پیشوا دلائی لامہ کے ساتھ ملاقات کر رہے ہیں۔

دلائی لامہ، باراک اوباما

دلائی لامہ، باراک اوباما

76 سالہ دلائی لامہ بدھ مَت کے ہزارہا پیروکاروں کے ایک مذہبی اجتماع ’کالا چکرا‘ کی قیادت کے لیے گزشتہ گیارہ روز سے واشنگٹن میں ہیں۔ یہ اجتماع اس سے پہلے پانچ سال قبل بھارت میں منعقد کیا گیا تھا۔ وائٹ ہاؤس اب تک اس بارے میں مکمل خاموشی اختیار کیے ہوئے تھا کہ اوباما دلائی لامہ سے ملاقات کریں گے بھی یا نہیں۔

اب وائٹ ہاؤس کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’اس ملاقات میں صدر کی جانب سے تبت کی منفرد مذہبی، ثقافتی اور لسانی شناخت کے تحفظ اور تبتیوں کے انسانی حقوق کی پاسداری پر بے حد زور دیا جائے گا‘۔ مزید یہ کہ صدر اوباما اختلافات کو دور کرنے کے لیے دلائی لامہ کے نمائندوں اور چینی حکومت کے مابین مکالمت کی بھی حمایت کا اظہار کریں گے۔

پانچ جولائی کو واشنگٹن پہنچنے پر دلائی لامہ کا استقبال کیا جا رہا ہے

پانچ جولائی کو واشنگٹن پہنچنے پر دلائی لامہ کا استقبال کیا جا رہا ہے

اوباما کی دلائی لامہ کے ساتھ فروری 2010ء میں ہونے والی ملاقات کی طرح اس بار بھی وائٹ ہاؤس کی کوشش ہے کہ تازہ ملاقات کو بھی کم سے کم نمایاں کیا جائے اور یہی وجہ ہے کہ اوباما، جو عام طور پر اوول آفس میں سربراہانِ مملکت سے ملاقات کرتے ہیں، دلائی لامہ کے ساتھ وائٹ ہاؤس کے مَیپ روم میں ملااقت کریں گے اور اس موقع پر رپورٹرز کو بھی داخلے کی اجازت نہیں ہو گی۔ بتایا گیا ہے کہ یہ ملاقات تقریباً ایک گھنٹے تک جاری رہے گی۔

دوسری جانب آج ہفتے کو چین نے صدر اوباما پر زور دیا ہے کہ وہ دلائی لامہ کے ساتھ ملاقات کا فیصلہ واپس لے لیں۔ چینی وزارتِ خارجہ کے ایک ترجمان نے کہا کہ اوباما کو دلائی لامہ کے ساتھ ملاقات نہیں کرنی چاہییے اور ’چین کے اندرونی معاملات میں مداخلت‘ نہیں کرنی چاہیے۔

بیجنگ حکومت 1959ء سے جلا وطنی کی زندگی گزارنے والے اور امن کا نوبل انعام حاصل کرنے والے دلائی لامہ کو علٰیحدگی پسند قرار دیتی ہے۔ چینی وزارتِ خارجہ نے امریکہ کو انتباہ کرتے ہوئے یہ کہا تھا کہ چین دلائی لامہ کے دورہ امریکہ کی ’سختی سے مخالفت‘ کرتا ہے۔

دلائی لامہ گیارہ روز تک امریکہ میں قیام کے بعد اس ویک اَینڈ پر وہاں سے رخصت ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں

دلائی لامہ گیارہ روز تک امریکہ میں قیام کے بعد اس ویک اَینڈ پر وہاں سے رخصت ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں

بین الاقوامی تحریک برائے تبت نے دلائی لامہ کے ساتھ ملاقات کے سلسلے میں وائٹ ہاؤس کے فیصلے کو سراہا ہے اور کہا ہے کہ اس سے ان عناصر کو تقویت ملے گی، جو دباؤ کے ماحول میں بڑے خطرات مُول لیتے ہوئے مل بیٹھتے ہیں، اپنے خیالات کا تبادلہ کرتے ہیں اور انصاف کا مطالبہ کرتے ہیں۔

دلائی لامہ کا یہ دورہ ایک ایسے وقت پر عمل میں آ رہا ہے، جب ایڈ مرل مائیک مولن نے اسی ہفتے چین کا دورہ کیا ہے، نائب صدر جو بائیڈن اگلے مہینے چین کے دورے پر جانے والے ہیں جبکہ 25 جولائی کو وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن بھی چین جانے والی ہیں۔

یکے بعد دیگرے برسرِ اقتدار آنے والے چار امریکی صدور دلائی لامہ کے ساتھ ملاقات کر چکے ہیں تاہم صرف جورج ڈبلیو بُش نے کھلے عام اس تبتی پیشوا کے ساتھ ملاقات کی تھی، جب اُنہوں نے 2007ء میں دلائی لامہ کو امریکی کانگریس کی جانب سے گولڈ میڈل پیش کیا تھا۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس