1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اوباما: الیکشن میں کامیابی کا ایک سال

امریکی عوام کی ایک بڑی تعداد اپنے صدر سے بڑی حد تک مطمئن ہے اور بہت سی امیدیں وابستہ کئے ہوئےہے۔ ماہرین کہتے ہیں ایک سال کے دوران اوباما بین الاقوامی سطح پر امریکہ کی ساکھ بہتر کرنے میں کافی حد تک کامیاب رہے ہیں۔

default

گزشتہ برس4 نومبرکو باراک اوباما 44 ویں امریکی صدر منتخب ہوئے۔ پہلے سیاہ فام کے امریکی صدر منتخب کو ہونے کو ایک تاریخی واقعہ قرار دیا گیا۔ اپنے انتخاب کے فورا بعد ہی باراک اوباما نے کہا تھا کہ وہ دُنیا میں امریکہ اور اُس کے صدر کی ساکھ کو پھرسے بہتر بنانے میں اپنا کردار ادا کریں گے۔ باراک اوباما کو امریکہ کے ساتھ ساتھ پوری دُنیا میں بھی ایک نجات دہندہ کے طور پر دیکھا جانے لگا۔ آج اوباما کو صدر منتخب ہوئے ایک سال بیت گیا ہےکیا اوباما ان ساری توقعات پرپورے اترسکے ہیں؟

ایک سال قبل باراک اوباما کو دہشت گردی ، مشرقی وسطی امن عمل اور اقتصادی بحران جیسے مسائل کا سامنا تھا۔ منتخب ہونے کے ساتھ ہی ان مسائل کے حوالے سے ان کے بیانات سامنے آنے لگے ۔ مشرق وسطی میں پائیدارامن قائم کرنے کی کوششیں تیز کر دی گئیں، دہشت گردی کا مقابلہ کرنے کے لئے نئی حکمت عملی پر عمل شروع ہو گیا۔ تاہم ابھی تک صرف اقتصادی بحران پر اٹھائے جانے والے اقدامات کے ہی مثبت نتائج سامنے آئے ہیں۔

Obama Amtseinführung Mann mit Obama Mütze und Flagge vor dem Kapitol

واشنگٹن میں ایک سیاہ فام نوجوان اوباما کے نام کی ٹوپی پہنے ہوئے

ماہرین اقتصادیات کہتے ہیں کہ اوباما انتظامیہ کے تیز رفتار اقدامات کی وجہ سے ہی دنیا کی اس سب سے بڑی معیشت کو سہارہ ملا۔ لیکن دوسری جانب بے امریکہ میں بڑھتی ہوئی بے روز گاری کا مسئلہ ابھی بھی جاری ہے۔ کیلی فورنیا یونیورسٹی کے ماہر اقتصادیات سنُگ ون کہتے ہیں کہ ان کے خیال میں اوباما نے اس بحران کا بہت احسن طریقے سے مقابلہ کیا ہے تاہم یہ دیکھنا ابھی باقی ہے کہ اس حکمت عملی کےکیا نتائج سامنے آتے ہیں۔

چارسہ ماہیوں کے بعد پہلی مرتبہ گزشتہ سہ ماہی میں امریکی اقتصادیات میں تین اعشاریہ پانچ فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ تاہم ماہرین کہتے ہیں کہ ملک میں بڑھتی ہوئی بے روز گاری ابھی بھی ایک پیچیدہ مسئلہ ہے ۔

چار نومبر وہ تاریخی دن تھا جب کسی سیاہ فام کو امریکہ کے اہم ترین منصب کے لئے چنا گیا تھا۔ امریکی کی سیاہ فام آبادی میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اورانہوں نے تعلیم ، روز گار جسے شعبوں میں اوباما سے بہت سی امیدیں بھی وابستہ کر لیں۔ سیاہ فام آبادی کےحقوق کے لئے کام کرنے والی ایک تنظیم کے صدر نولن رولنس کہتے ہیں کہ سیاہ فام آبادی کو اس بات پر فخر ہے کہ ان کا صدرانہی میں سے ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ جب وہ نیو اورلینس کی سڑکوں سے گزرتے ہیں تو انہیں نوجوان اوباما کی تصویر والی ٹی شرٹ پہنے ہوئے نظر آتے ہیں۔ یہ صرف باراک اوباما کے ساتھ ساتھ امریکہ سے یکجہتی کا اظہار ہے، جو اس سے پہلے کبھی نہیں دیکھا گیا۔

US-Wahlen 2008 Barack und seine Familie auf der Wahlparty in Chicago

صدر اوباما 2008ء میں اپنی کامیابی کے بعد اپنی اہلیہ اور بچوں کے ہمراہ

اس کا تعلق صرف اس بات سے ہے کہ سیاہ فام آبادی کو اس پر فخر ہے کہ وائٹ ہاؤس میں جو ہے وہ ان ہی میں سے ایک ہے۔

باراک اوباما نے دفتر سنبھالنے کے دوسرے دن ہی گوانتانامو بند کرنے کا اعلان کیا، اس کےعلاوہ عراق کے شہری علاقوں سے امریکی فوجیوں کی واپسی اور دُنیا کے بحران زدہ علاقوں میں اپنے خصوصی مندوب روانہ کرنے جیسے اقدامات کی وسیع تر حلقوں میں پذیرائی ملی۔ دنیا میں امن قائم کرنے کی انہی کوششوں کی بناء پر انہیں امن کے نوبیل انعام سے بھی نوازا گیا۔ اس کےعلاوہ ایسے متعدد شعبے ہیں، جن میں کوئی پیش رفت نہ ہوسکی۔ امریکہ میں اوباما کے خلاف مظاہرے بھی ہوئے تاہم ان سب کے باوجود امریکی عوام کی ایک بڑی تعداد اپنے صدر سے بڑی حد تک مطمئن ہے اور بہت سی امیدیں وابستہ کئے ہوئےہے۔ ماہرین کہتے ہیں بلاشبہ یہ اس ایک سال کے دوران اوباما بین الاقوامی سطح پر امریکہ کی ساکھ بہتر کرنے میں کافی حد تک کامیاب رہے ہیں۔

رپورٹ:عدنان اسحاق

ادارت :عاطف بلوچ