1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

انٹرسیکس بچوں کے جنسی اعضاء کی سرجری پر پابندی کا مطالبہ

انسانی حقوق کے سرکردہ کارکنوں نے مطالبہ کیا ہے کہ بین صنفی نوزائیدہ بچوں کے اعضائے جنسی کی سرجری نہ کی جائے کیونکہ جراحی کا یہ عمل انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

انسانی حقوق کے لیے سرگرم عناصر  پر مشتمل ایک گروپ نے کہا ہے کہ صرف امریکا میں ہی حالیہ برسوں کے دوران کئی سو ایسے انٹر سیکس (بین صنفی) بچوں کے جنسی اعضاء کی سرجری کی گئی، جن کی پیدائش کے وقت ان کی صنف غیر واضح تھی۔

ایک غلط جسم میں قید ہونا کیسا لگتا ہے؟

پاکستانی ہیجڑوں کے دکھ کون سنے؟

’خدا میرا بھی ہے‘

مردوں اور خواتین دونوں ہی کی جنسی خصوصیات کے ساتھ پیدا ہونے والے بچوں کو بین صنفی کہا جاتا ہے۔  بین صنفی بچے بعض اوقات مرد اور عورت دونوں کے جنسی اعضاء کی ساخت کے مرکب کے ساتھ پیدا ہوتے ہیں تاہم  نہ تو وہ واضح طور پر لڑکا اور نہ ہی لڑکی نظر آتے ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 00:43

فرانسیسی میگزین کے کور پر پہلی بار ٹرانس جینڈر ماڈل

 

ہیومن رائٹس واچ اور انٹر ایکٹ نے اپنی مشترکہ رپورٹ میں لکھا ہے کہ ایسے بین صنفی بچوں کو لڑکا یا لڑکی بنانے کی خاطر ایسے آپریشن کرنے کا رواج بڑھ چکا ہے۔

عام طور سے سرجن  جن بچوں میں جس جنس کی خصوصیات زیادہ ہوتی ہیں، انہیں وہی جنس دینے کی کوشش کرتے ہیں۔

جراحی کے  ذریعے ان بچوں کے جنسی اعضاء کے خد و خال واضح کر دیے جاتے ہیں۔

اس رپورٹ میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ واشنگٹن حکومت ایسے تمام جراحی اعمال پر پابندی لگا دے۔

ہیومن رائٹس واچ سے منسلک محقق کیل نائٹ نے تھامسن روئٹرز فاؤنڈیشن کو بتایا کہ ایسے آپریشنز ’طبی شعبے میں انسانیت کے خلاف زیادتیوں‘ کے زمرے میں بھی آ سکتے ہیں، ’’یہ جراحی اعمال طبی طور پر غیر ضروری ہیں۔ یہ نقصان دہ ہیں اور ان سے مطلوبہ نتائج حاصل ہونے کی کوئی ضمانت بھی نہیں دی جا سکتی۔‘‘

رپورٹ کے مطابق بچوں میں جنس کے تعین کو یقینی بنانے کے حوالے سے کیے جانے والے آپریشنز نقصان دہ تو ثابت ہوئے ہیں لیکن اس کا فائدہ ابھی تک واضح نہیں ہو سکا ہے۔ اعدادوشمار کے مطابق خیال کیا جاتا ہے کہ دنیا کی مجموعی آبادی میں سے 1.7 فیصد یا 127.5 ملین افراد دونوں صنفی خصوصیات کے ساتھ پیدا ہوئے ہیں۔

Symbolbild Gleichberechtigung Wahlrecht Iran (Fotolia/Marco2811)

مردوں اور خواتین دونوں ہی کی جنسی خصوصیات کے ساتھ پیدا ہونے والے بچوں کو بین صنفی کہا جاتا ہے

امریکا میں تین سابق سرجن ڈاکٹروں کی ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق  بچوں کے اعضائے مخصوصہ کی پلاسٹک سرجری مستقبل میں ’جذباتی دباؤ‘ کا سبب بن سکتی ہے۔ نوے کی دہائی سے کئی طبی حلقے اس عمل کے حوالے سے خبردار کر رہے ہیں تاہم اس ضمن میں ان کی  کوششیں  کارآمد ثابت نہیں ہو سکی ہیں۔

اقوام متحدہ کے کئی ادارے بھی اسے بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی قرار دے چکے ہیں۔ سن دو ہزار پندرہ میں مالٹا ایسا پہلا ملک بن گیا تھا، جس نے انٹر سیکس یا بین صنفی بچوں کی غیر ضروری سرجری پر پابندی عائد کی تھی۔

DW.COM

Audios and videos on the topic