1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

انقرہ میں دو دھماکوں کی گونج، لوگ سڑکوں پر آ گئے

ترکی میں فوجی بغاوت کی کوششوں کی خبروں کے دوران دارالحکومت انقرہ سے دو زوردار دھماکوں کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

یورپ اور ایشیا کے سنگم پر واقع ملک ترکی کے وزیر برائے یورپی یونین عُمر چیلیک نے ترک فوجیوں پر زور دیا ہے کہ وہ فوج کے باغی گروپ کی طرف سے ملک میں فوجی بغاوت کے احکامات کر رد کرتے ہوئے اس کوشش کو ناکام بنا دیں۔

این ٹی وی پر چیلیک نے اپنے بیان میں کہا، ’’ہم اپنی جمہوریت کے تحفظ کے لیے اپنی آخری سانس تک جدوجہد جاری رکھیں گے۔ ترکی کی سرکاری نیوز ایجنسیوں کے مطابق ترک فوج کے ہیلی کاپٹرز نے سیٹیلائیٹ اسٹیشن TURKSAT پر حملے کیے ہیں۔

سی این این ترک نے کہا ہے کہ ترک صدر ایردوآن محفوظ ہیں لیکن ان کے بارے میں کوئی واضح بیان سامنے نہیں آیا ہے۔ ترکی کے وزیرِ اعظم بن علی یلدرم نے فوج کے ’ایک گروپ‘ کی جانب سے جمہوری حکومت کا تختہ الٹنے کی فوج کی کوشش کو ’غیر قانونی اقدام‘ قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے۔ ترک وزیرِ اعظم نے تاہم کہا ہے کہ حکومت کا تختہ نہیں الٹا گیا اور اقتدار حکومت ہی کے پاس ہے۔

ایک سینیئر حکومتی اہلکار نے کہا ہے کہ جمعے کی شب ترک فوج کے ایک گروپ کی جانب سے ہونے والی بغاوت کی کوشش میں فوج کے اندر اس گروپ کے لیے کوئی بڑی حمایت نہیں پائی جاتی۔

اس اہلکار نے تاہم اس بارے میں کوئی وضاحت نہیں کی کہ اس کا یہ بیان ترک صدر کے اُن بیانات کی باز گشت لگ رہا ہے، جس میں ایردوآن نے کہا تھا کہ بغاوت کی کوشش فوج کے ایک محدود گروپ کی طرف سے ہوئی ہے جسے ناکام بنا دیا جائے گا۔ انقرہ سے موصولہ تازہ ترین اطلاعات کے مطابق ترک پارلیمان کے باہر ٹینک گشت کرتے دکھائی دے رہے ہیں۔

دریں اثناء سی این این ترک کو ٹیلی فون پر ایک بیان دیتے ہوئے ترک صدر ایردوآن نے کہا ہے کہ ’’وہ ترکی کے صدر کی حیثیت برقرار رکھے ہوئے ہیں۔‘‘ ایردوآن نے اپنے عوام سے سڑکوں پر نکل کر فوجی بغاوت کی کوشش کے خلاف سراپا احتجاج بن جانے کی اپیل کی ہے۔