1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

انصاف کا راستہ روکنے کا شبہ، ’خود ٹرمپ کے خلاف بھی چھان بین‘

امریکی میڈیا رپورٹوں کے مطابق صدر ٹرمپ کے خلاف ممکنہ طور پر انصاف کا راستہ روکنے کے شبے میں چھان بین کی جا رہی ہے۔ اس حوالے سے ٹرمپ کے خلاف الزامات گزشتہ ماہ ایف بی آئی کے سربراہ کومی کی برطرفی کے بعد سامنے آئے تھے۔

امریکی دارالحکومت واشنگٹن سے جمعرات پندرہ جون کو ملنے والی نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق اخبار واشنگٹن پوسٹ نے بدھ چودہ جون کو رات گئے اپنے ایک مراسلے میں لکھا کہ گزشتہ برس کے صدارتی الیکشن سے قبل ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی امیدوار کے طور پر سیاسی مہم کے اعلیٰ عہدیداروں کے روس کے ساتھ ممکنہ رابطوں کی چھان بین کے لیے نامزد کردہ خصوصی تفتیشی افسر کی طرف سے اب اس امر کا جائزہ لیا جا رہا ہے کہ آیا اسی سلسلے میں ٹرمپ نے صدر کے طور پر انصاف کا راستہ روکنے کی کوشش کی تھی۔

Robert Mueller

خصوصی تفتیشی افسر اور ایف بی آئی کے سابق سربراہ روبرٹ میولر

صدر کے طور پر ڈونلڈ ٹرمپ نے ممکنہ طور پر انصاف کا راستہ روکا تھا، اس سلسلے میں الزامات اس وقت سامنے آئے تھے جب گزشتہ ماہ مئی میں ٹرمپ نے اپنے اختیارات استعمال کرتے ہوئے ایف بی آئی کے اس وقت کے سربراہ جیمز کومی کو ان کے عہدے سے برطرف کر دیا تھا۔ کومی تب ٹرمپ کے سابق سیاسی رفقاء کے روس کے ساتھ انہی مبینہ رابطوں کی چھان بین کر رہے تھے۔

واشنگٹن پوسٹ کے علاوہ اخبار نیو یارک ٹائمز نے بھی اس موضوع پر اسی طرح کی اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ روبرٹ میولر اب صدر ٹرمپ کی ذات کے حوالے سے ان امکانات کا جائزہ بھی لے رہے ہیں کہ آیا موجودہ امریکی صدر نے انصاف کی راہ میں روڑے اٹکانے کی کوشش کی تھی۔ روبرٹ میولر خود بھی امریکا کے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف بی آئی کے ایک سابق سربراہ ہیں اور انہیں ٹرمپ کی سیاسی مہم کے روس کے ساتھ ممکنہ رابطوں کی تحقیقات کے لیے حال ہی میں خصوصی تفتیشی افسر نامزد کیا گیا تھا۔

امریکا کے دو معتبر اخبارات واشنگٹن پوسٹ اور نیو یارک ٹائمز کی ان رپورٹوں کے مطابق روبرٹ میولر نے ڈونلڈ ٹرمپ کی ذات کے حوالے سے اس چھان بین کا فیصلہ ابھی گزشتہ ہفتے امریکی سینیٹ کی ایک کمیٹی میں ہونے والی سماعت کی روشنی میں کیا۔

Bildkombo U.S. Präsident Donald Trump und FBI Direktor James Comey

جیمز کومی، دائیں، اور صدر ٹرمپ

اس سماعت کے دوران ٹرمپ کی طرف سے برطرف کیے گئے ایف بی آئی کے سابق سربراہ جیمز کومی نے حلفیہ طور پر ارکان کانگریس کو بتایا تھا کہ انہیں یقین ہے کہ ٹرمپ نے انہیں روس کے حوالے سے کی جانے والی تفتیش کی وجہ سے برطرف کیا تھا۔

اس سماعت کے دوران جیمز کومی نے سینیٹ کی کمیٹی کو یہ بھی بتایا تھا کہ خود کومی نے ایف بی آئی کے سربراہ کے طور پر صدر ٹرمپ کو بتایا تھا کہ وہ روس کے ساتھ مبینہ معاملات کی چھان بین تو کر رہے ہیں لیکن خود ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف کوئی چھان بین نہیں کی جا رہی۔

آیا ڈونلد ٹرمپ نے انصاف کا راستہ روکنے کی کوئی کوشش کی تھی، اس سلسلے میں میڈیا رپورٹوں کے مطابق روبرٹ میولر اب موجودہ ٹرمپ انتظامیہ کے تین ایسے اعلیٰ اہلکاروں کے انٹرویو کرنے کی کوشش بھی کر رہے ہیں، جو گزشتہ برس کی ٹرمپ انتخابی مہم کا حصہ نہیں تھے۔

بتایا گیا ہے کہ یہ شخصیات نیشنل انٹیلیجنس کے ڈائریکٹر ڈَین کوٹس، نیشنل سکیورٹی ایجنسی کے سربراہ مائیکل روجرز اور رچرڈ لیجَیٹ ہیں، جو نیشنل سکیورٹی ایجنسی (این ایس اے) کے ایک سابق ڈپٹی ڈائریکٹر ہیں۔

ملتے جلتے مندرجات