1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

انسانی فضلہ متبادل توانائی کا اہم ذریعہ، اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کی ایک تازہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انسانی فضلے سے پیدا ہونے والی گیس متبادل توانائی کا ایک اہم ذریعہ ثابت ہو سکتی ہے اور یہ عمل گلوبل وارمنگ سے نمٹنے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔

Bildergalerie Indien Hygiene

بھارتی حکومت عوام کو ٹوائلٹس کی فراہمی ممکن بنانے کی کوشش میں ہے

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے بدھ چار اکتوبر کو اقوام متحدہ کی ایک تازہ رپورٹ کے حوالے سے بتایا کہ انسانی فضلے کو پراسس کر کے توانائی حاصل کی جا سکتی ہے، جس سے کئی لاکھ گھرانوں کی توانائی کی ضروریات پوری کی جا سکتی ہیں۔ ’انسٹیٹیوٹ فار واٹر، انوائرنمنٹ اینڈ ہیلتھ‘ کی اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ عمل گلوبل وارمنگ سے نمٹنے میں بھی اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق انسانی فضلے سے پیدا ہونے والی گیس سے ترقی پذیر ممالک میں لاکھوں گھروں کو بجلی کی فراہمی ممکن بنانے کے علاوہ ان علاقوں میں نکاسی آب کو بھی بہتر بنایا جا سکتا ہے۔ منگل کی رات جاری کی گئی اس رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں یہ ٹیکنالوجی انتہائی اہم ثابت ہو سکتی ہے۔

بائیو گیس، جس میں ساٹھ فیصد میتھین گیس ہوتی ہے، دراصل انسانی فضلے میں موجود بیکٹیریا کو پراسس کرنے کے بعد تیار کی جاتی ہے۔ اقوام متحدہ کے اس انسٹیٹیوٹ کی طرف سے کہا گیا ہے کہ اگر ان منصوبہ جات پر عملدرآمد ممکن بنا لیا جاتا ہے، تو بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں متبادل توانائی کے حصول کے حوالے سے یہ ایک انتہائی اہم پیشرفت ثابت ہو سکتی ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ دنیا بھر میں تقریباﹰ ایک بلین انسانوں کے پاس رفع حاجت کے لیے ٹائلٹ استعمال کرنے کی سہولت نہیں ہے اور ان میں سے ساٹھ فیصد کا تعلق بھارت سے ہے۔ یہ لوگ رفع حاجت کے لیے کھلے مقامات کا رخ کرتے ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ اگر ان انسانوں کا خارج کردہ فضلہ اکٹھا کر لیا جائے تو اس سے سالانہ بنیادوں پر دو سو ملین ڈالر مالیت کے برابر بائیو گیس تیار کی جا سکتی ہے۔ محققین کے مطابق اس مقدار کو بعدازاں 376 ملین ڈالر مالیت کے برابر تک بھی لے جایا جا سکتا ہے۔

Bildergalerie Indien Hygiene

تقریباﹰ ایک بلین انسانوں کے پاس ٹائلٹ استعمال کرنے کی سہولت نہیں ہے اور ان میں سے ساٹھ فیصد کا تعلق بھارت سے ہے

اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق اس بائیو گیس سے ترقی پذیر ممالک میں اٹھارہ ملین گھرانوں کی توانائی کی ضروریات کو پورا کیا جا سکتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق ان ممالک میں ٹائلٹ کے باقاعدہ انتظام کی وجہ سے حفظان صحت اور پبلک ہیلتھ کے شعبوں میں بھی بہتری آئے گی۔ ترقی پذیر ممالک میں بیماریوں کی اہم وجہ نکاسی آب کے ناقص نظام کو بھی قرار دیا جاتا ہے۔