1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اندر کی باتیں میڈیا تک نہ پہنچیں، ٹرمپ کی جیمز کومی کو تنبیہ

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف بی آئی کے سابق سربراہ جیمز کومی کو تنبیہ کی ہے کہ ’اندر کی باتیں میڈیا تک نہیں پہنچنا چاہییں‘۔ جیمز کومی کو صدر ٹرمپ نے ابھی اسی ہفتے ان کے عہدے سے برطرف کر دیا تھا۔

Bildkombo U.S. Präsident Donald Trump und FBI Direktor James Comey (Reuters/J. Lo Scalzo/G. Cameron)

جیمز کومی، دائیں، اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ

امریکی دارالحکومت واشنگٹن سے جمعہ بارہ مئی کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹوئٹر پر جاری کردہ اپنے ایک پیغام میں آج جمعے کے روز جیمز کومی کو واضح طور پر خبردار کرتے ہوئے لکھا کہ ایف بی آئی کے اس سابق ڈائریکٹر کو کسی بھی طرح کی ’’اندرونی معلومات‘‘ میڈیا تک پہنچانے سے گریز کرنا چاہیے۔

ٹرمپ نے اس بارے میں اپنی ایک ٹویٹ میں لکھا، ’’اس سے پہلے کہ کومی کی طرف سے کوئی بھی سرکاری معلومات ذرائع ابلاغ تک پہنچائی جائیں، بہتر ہو گا کہ وہ یہ امید بھی رکھیں کہ ہماری مختلف اوقات پر ہونے والی بات چیت کی کوئی ریکارڈنگز نہ ہوں۔‘‘

ٹرمپ نے ایف بی آئی کے سربراہ جیمز کومی کو برطرف کر دیا

میری شکست میں جیمز کومی اور پوٹن کا ہاتھ ہے، کلنٹن

ایف بی آئی ہلیری کلنٹن پر فرد جرم عائد کرنے کی تجویز نہیں دے گی

تبصرہ نگاروں کے مطابق صدر ٹرمپ نے جیمز کومی کو ایف بی آئی کے سربراہ کے عہدے سے برطرف کرنے کا جو فیصلہ کیا تھا، اس کی وائٹ ہاؤس کی طرف سے وجہ امریکی اٹارنی جنرل سیشنز اور ان کے نائب کی طرف سے صدر کو کی گئی سفارشات بتائی گئی تھیں۔

اپنی برطرفی کے بعد کومی نے کہا تھا کہ قانوناﹰ امریکی صدر کو ان کے عہدے کی وجہ سے یہ اختیار ہوتا ہے کہ وہ ایف بی آئی کی کسی بھی سربراہ کو جب چاہے اس کے عہدے سے برطرف کر سکتے ہیں۔ کومی کو ٹرمپ کے پیش رو صدر باراک اوباما نے 10 سال کے لیے امریکا کے وفاقی تحقیقاتی ادارے کا سربراہ مقرر کیا تھا۔

اس بارے میں اب ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹوئٹر پر پیغام نے جہاں یہ واضح کر دیا ہے کہ صدر ٹرمپ نے جو تنبیہ کی ہے، اس کے ذریعے وہ کومی کو اہم معلومات کے ساتھ ممکنہ طور پر میڈیا تک جانے سے روکنا چاہتے ہیں۔ ساتھ ہی یہ ٹویٹ اس سوچ کی بھی عکاس ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ کی رائے میں اگر کوئی ایسی نئی معلومات میڈیا میں نظر آئیں، جن کا کسی نہ کسی طرح تعلق کومی سے بنتا ہو، تو اس کا مطلب یہ ہو گا ان معلومات کا ذریعہ جیمز کومی ہی ہیں۔

اس کے علاوہ ڈونلڈ ٹرمپ کی اسی ٹویٹ کا ایک دوسرا مطلب بھی ہے۔ اے ایف پی نے لکھا ہے کہ ٹرمپ نے اپنی ٹویٹ میں جب یہ لکھا، کہ کومی کو یہ امید کرنا چاہیے کہ ان کی ٹرمپ کے ساتھ مختلف مواقع پر ہونے والی بات چیت کی کوئی ریکارڈنگز نہ ہوں، تو اس کا مطلب دراصل اس امر کی طرف اشارہ تھا کہ ٹرمپ غالباﹰ ایسی معلومات بھی رکھتے ہیں، جو ہیں تو ٹرمپ کی کومی کے ساتھ ملاقاتوں ہی کے بارے میں، لیکن جو ایف بی آئی کے اس سابق ڈائریکٹر کے لیے شرمندگی اور پریشانی کا سبب بن سکتی ہیں۔

DW.COM