1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

انتہاپسندوں کے ساتھ پاکستانی ’تعلقات‘ پر اوباما کا انتباہ

امریکی صدر باراک اوباما نے پاکستان پر افغانستان کے مستقبل سے متعلق سودے بازی کا الزام لگایا ہے۔ انہوں نے خبردار کیا ہے کہ اس کی انٹیلیجنس سروسز اور انتہاپسندوں کے درمیان کسی حد تک روابط ہیں۔

default

باراک اوباما

باراک اوباما نے جمعرات کو وائٹ ہاؤس میں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں کہا: ’’افغانستان میں حالات کیا رُخ اختیار کریں گے، میرے خیال میں انہوں نے اس بات پر سودے بازی کی ہے۔ اس سودے بازی کا ایک حصہ بدنام کرداروں کے ساتھ تعلقات رکھنا بھی ہے، جن کے بارے میں ان کا خیال ہے کہ افغانستان سے اتحادی فورسز کے جانے کے بعد وہ اقتدار میں آ سکتے ہیں۔‘‘

انہوں نے مزید کہا: ’’ہم نے پاکستان کو جس بات پر قائل کرنے کی کوشش کی ہے، وہ یہ ہے کہ مستحکم افغانستان ان کے اپنے مفاد میں ہے اور انہیں مستحکم اور آزاد افغانستان سے خطرہ محسوس نہیں کرنا چاہیے۔‘‘

اوباما نے کہا کہ پاکستان امریکی مفادات کو نظرانداز کرتا دکھائی دیا تو اس کے ساتھ طویل المدتی اسٹریٹیجک تعلقات میں واشنگٹن انتظامیہ کی تسلی نہیں ہو گی۔

تاہم انہوں نے یہ بھی تسلیم کیا ہے کہ ابھی کچھ کام باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ پاکستان کی مدد کے لیے بدستور سنجیدہ ہے۔ اوباما کا کہنا تھا کہ امریکہ

Flash-Galerie Wahlen in Afghanistan 2009

امریکی قیادت میں ڈیڑھ لاکھ کے قریب اتحادی فوجی گزشتہ دس برس سے افغانستان میں دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑ رہے ہیں

اور پاکستان مختلف معاملات میں ایک دوسرے سے تعاون کر رہے ہیں اور خطے میں القاعدہ سے وابستہ فورسز کے خلاف حالیہ کامیابیاں پاکستان کی مدد کے بغیر ممکن نہیں تھیں۔

پاکستان اور امریکہ کے درمیان نیا تنازعہ امریکی فوج کے سابق سربراہ ایڈمرل مائیک مولن کے بیانات کے بعد پیدا ہوا۔ انہوں نے کہا تھا کہ حقانی نیٹ ورک کو آئی ایس آئی کی حمایت حاصل ہے۔ دوسری جانب حقانی نیٹ ورک کی جانب سے یہ بیان سامنے آ چکا ہے کہ اب پاکستان میں اس کے مزید ٹھکانے نہیں ہیں اور وہ اپنی کارروائیاں جاری رکھنے کے لیے افغانستان کو زیادہ محفوظ خیال کرتے ہیں۔

پاکستان کے عسکری ذرائع کا کہنا ہے کہ اس نیٹ ورک کے دس فیصد تک فائٹر ہی پاکستان میں ہیں جبکہ باقی افغانستان میں ہیں۔

 

رپورٹ: ندیم گِل خبر رساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس