انتہائی دائیں بازو کی یورپی سیاسی جماعتوں کا پراگ میں اجلاس | حالات حاضرہ | DW | 16.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

انتہائی دائیں بازو کی یورپی سیاسی جماعتوں کا پراگ میں اجلاس

چیک جمہوریہ کے دارالحکومت پراگ میں ہفتہ سولہ دسمبر کو انتہائی دائیں بازو کی یورپی سیاسی جماعتوں کا ایک اجلاس ہو رہا ہے۔ ان جماعتوں نے ’یورپ کے لیے اقوام اور آزادیوں کی تحریک‘ نامی ایک مشترکہ پلیٹ فارم قائم کر رکھا ہے۔

default

کئی یورپی ممالک میں انتہائی دائین بازو کی سیاسی جماعتیں تارکین وطن کی آمد اور اسلام کے پھیلاؤ کے سخت خلاف ہیں

فرانسیسی دارالحکومت پیرس سے ہفتے کے روز موصولہ نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق ’یورپ کے لیے اقوام اور آزادیوں کی تحریک‘ نامی پلیٹ فارم یا MENL کے اس اجلاس میں مختلف یورپی ممالک کی انتہائی دائیں بازو کی جو پارٹیاں حصہ لے رہی ہیں، ان میں  فرانس کی نیشنل فرنٹ، آسٹریا کی فریڈم پارٹی، اٹلی کی علاقائی جماعت شمالی لیگ، اور ہالینڈ کی پارٹی آف فریڈم خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

مہاجرین مخالف جماعت نے قوم پرست رہنما کو شریک سربراہ چن لیا

اسلام اور مہاجرین مخالف سیاسی جماعت AFD کا نیا صدرکون بنےگا؟

ان جماعتوں کی نمائندگی کرتے ہوئے انتہائی دائیں بازو کے جو سرکردہ یورپی سیاستدان پراگ میں آج کے اجلاس میں شریک ہو رہے ہیں، ان میں فرانسیسی نیشنل فرنٹ کی خاتون سربراہ مارین لے پین، آسٹرین فریڈم پارٹی کے لیڈر ہائنز کرسٹیان شٹراخے، اطالوی نارتھ لیگ کے چند مرکزی رہنما اور ہالینڈ کی پارٹی آف فریڈم کے بانی اور اسلام اور مہاجرین مخالف متنازعہ رہنما گیئرٹ وِلڈرز بھی شامل ہیں۔

ان سیاسی رہنماؤں کو پراگ آنے کی دعوت یورپ میں انتہائی دائیں باز وکے سیاسی منظر نامے پر ابھرنے والی نئی لیکن کافی طاقت ور شخصیت تَومِیو اوکامُورا نے دی تھی۔ اوکامُورا نے اپنی سیاسی جماعت ’فریڈم اینڈ ڈائریکٹ ڈیموکریسی پارٹی‘ (SPD) کی بنیاد 2015ء میں رکھی تھی۔

Österreich Treffen der EU-Rechten in Wien

دائیں بازو کی انتہا پسند یورپی جماعتوں کا ایک اجلاس گزشتہ برس جون میں آسٹریا میں بھی ہوا تھا

یہ پارٹی چیک جمہوریہ میں مہاجرین اور تارکین وطن کی آمد کی سخت مخالف ہے اور اس نے انتہائی دائیں باز وکے اپنے سیاسی ایجنڈے کو آگے لے جاتے ہوئے اسی سال اکتوبر میں ہونے والے چیک پارلیمانی الیکشن میں 10.6 فیصد ووٹ حاصل کیے تھے۔

ہنگری ميں مسلمانوں کے خدشات جاننے کے ليے معلوماتی واک

شامی مہاجرین کی واپسی کا مطالبہ سنگ دلی ہے، گرین پارٹی

یورپ کا ’ٹرمپ‘ چیک جمہوریہ کا ممکنہ وزیراعظم

آج ہفتے کے روز پراگ میں ہونے والے اس اجلاس سے قبل امریکا کی جارجیا یونیورسٹی کے سیاسی امو رکے ماہر کاس مُوڈے نے ڈی پی اے کو بتایا کہ انتہائی دائیں بازو کے یورپی سیاسی گروپوں کی تحریک ’ایم ای این ایل ایک ایسی تنظیم ہے، جو بہت منظم نہیں ہے اور جس کا بنیادی مقصد عوام کی سیاسی نمائندگی کے نام پر یورپی یونین سے فنڈز کا حصول ہے‘۔

دائیں بازو کی انتہا پسندانہ سیاست پر قریب سے نظر رکھنے والے کاس مُوڈے نے ڈی پی اے کو بتایا کہ 2015ء میں قیام کے بعد سے اس یورپی تحریک کے سیاسی حجم میں ہونے والا اضافہ نہ ہونے کے برابر رہا ہے۔

Deutschland Knapp 100 Rechte demonstrieren in Köln

جرمنی میں انتہائی دائیں بازو کی اسلام مخالف تحریک بھی کافی عوامی ہمدردیاں حاصل کر چکی ہے، جو مہاجرین کی آمد کی بھی مخالف ہے

Brexit Reaktionen Archivbild Geert Wilders

ہالینڈ کے متنازعہ سیاستدان گیئرٹ ولڈرز جو وقفے وقفے سے اسلام کے خلاف بہت سخت بیانات دیتے رہتے ہیں

مُوڈے نے ڈی پی اے کو بتایا، ’’اس تحریک میں ابھی تک یورپ اور یورپی پارلیمان میں موجود انتہائی دائیں بازو کی بہت سخت گیر سوچ رکھنے والی وہ سیاسی جماعتیں یا گروپ شامل ہیں، جو دیگر امور کے علاوہ برطانیہ کے یورپی یونین سے اخراج کے فیصلے سے فائدہ تو اٹھانا چاہتے ہیں، لیکن ابھی تک ایسا کر نہیں سکے۔‘‘

مہاجرین مخالف مظاہروں میں شریک پادریوں کو معطل کر دیں گے، پولستانی چرچ

’مہاجرین پر پیسہ لگائیں یا اپنے بچوں پر‘

’مہاجرت مخالف ہی مہاجرین کی اسمگلنگ میں ملوث‘

ماہرین کا کہنا ہے کہ مستقبل میں یہ تحریک اس وجہ سے مزید کمزور ہو جائے گی کہ بریگزٹ کے ساتھ ہی یورپی پارلیمان سے برطانیہ کے بہت سخت سوچ رکھنے والے انتہائی دائیں بازو کے سیاستدان بھی رخصت ہو جائیں گے۔

ان حالات میں پراگ میں ہونے والے اجلاس کے ذریعے یہ تنظیم اپنے لیے کچھ نئی توانائی کی خواہش مند نظر آتی ہے، اور اسی لیے اب اس تحریک میں چیک جمہوریہ کے سیاستدان اوکامُورا کی پارٹی کو بھی شامل کیا جا رہا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 03:00

’’جرمنی کی اسلام اور مخالف جماعت کا انتخابی منشور‘‘

DW.COM

Audios and videos on the topic