1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ام الفہم: اسرائیلی پولیس کا عرب مظاہرین پر لاٹھی چارج

اسرائیل میں پولیس نے آج ان عرب مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس اور گرینیڈ استعمال کیا جو اس اسرائیلی عرب شہر میں انتہائی قوم پرست یہودیوں کی ایک ریلی کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔

default

ام الفہم نامی اس اسرائیلی شہر میں پولیس کے ترجمان نے بتا یا کہ منتشر کئے جانے سے پہلے عرب مظاہرین نے، جن کی تعداد چند سو تھی، پولیس پر پتھراؤ بھی کیا۔ اس دوران ہنگاموں پر قابو پانے والی اسرائیلی پولیس کے اہلکاروں نے، جن میں سے بہت سے گھوڑوں پر سوار تھے، ان مظاہرین کے خلاف کاروائی کی۔ پولیس نے دعویٰ کیا کہ اس کارروائی کے دوران دس عرب نقاب پوش مظاہرین کو گرفتار بھی کر لیا گیا۔

30 یہودی مظاہرین اسرائیل کے شمال میں واقع شہر ام الفہم پہنچے۔ یہ علاقہ ایک اسلامی موومنٹ کا گڑھ مانا جاتا ہے، جس کے لیڈر شیخ رائید صالح کا کہنا ہے کہ اسرائیل یروشلم میں مسلمانوں کے مقدس مقامات کے لئے ایک بڑا خطرہ بنا ہوا ہے۔

Selbstmordattentat in der nordisraelischen Stadt Afula

کٹر یہودی قوم پرست مظاہرین کی ریلی کچھ ہی دیر کے لئے نکالی گئی۔ دائیں بازو کی طرف جھکاؤ رکھنے والے اس گروپ کی حفاظت کے لئے پولیس بھی موجود تھی، جس نے کچھ دیر بعد ان یہودی مظاہرین کو بس کے ذریعے واپس بھیج دیا۔ دائیں بازو کے یہودی مظاہرین کے اس احتجاج کا مقصد اسرائیلی حکام پر اس لئے دباؤ ڈالنا تھا کہ شیخ صالح کی تحریک کو ممنوع قرار دیا جائے۔

اس احتجاجی ریلی کے ایک رہنما نے یہ بھی کہا کہ ام الفہم یہودی ریاست کا ایک حصہ ہے اور انہیں وہاں بلا روک ٹوک مارچ کرنے کا حق حاصل ہے۔ اس مارچ کی قیادت کرنے والے ایک یہودی رہنما باروخ مارزیل نے احتجاجی ریلی سے پہلے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ شیخ صالح کی تحریک سرطان کے عارضے کی مانند ہے جو اسرائیلی ریاست کو اندر سے تباہ کرنا چاہتی ہے اور اسی لئے وہ چاہتے ہیں کہ اس تحریک کو ممنوع قرار دیا جائے۔

اس گروپ کی طرف سےگزشتہ برس مارچ میں بھی ام الفہم میں ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی تھی، جس کے بعد شروع ہونے والی جھڑپوں میں دو درجن افراد زخمی ہو گئے تھے۔

شیخ صالح کو، جو ام الفہم کے رہائشی ہیں، نامناسب رویے کے الزام میں ایک اسرائیلی عدالت نے قید کی سزا سنادی تھی۔ شیخ صالح کی گرفتاری2007ء میں یروشلم میں پولیس کےعرب مظاہرین کے ساتھ ہونے والے تصادم کے دوران عمل میں آئی تھی۔ تب شیخ صالح اور ان کے بہت سے ساتھی یروشلم میں بیت المقدس کے قریب تعمیراتی منصوبوں کے خلاف احتجاج کر رہے تھے، جو کہ پوری اسلامی دنیا کے لئے تیسرا مقدس ترین مقام ہے۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: کشور مصطفٰی

DW.COM

ویب لنکس