1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی کارگو طیارہ دبئی میں گرگیا

ایک امریکی سامان بردار طیارہ دبئی کے ہوائی اڈے سے پرواز بھرنے کے چند ہی لمحوں بعد حادثے کا شکار ہوگیا ہے، جس میں سوار عملے کے دونوں افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

default

فائل فوٹو

عینی شاہدین کے مطابق طیارہ میں آگ بھڑک اٹھی تھی، جس کے تھوڑی ہی دیر بعد وہ کچھ ہی فاصلے پر واقع فوجی اڈے پر گرگیا تھا۔ بوئنگ747-400 ساختہ امریکی کمپنی یونائیٹڈ پارسل سروس ’’ یو پی ایس‘‘ کی ملکیت تھا۔

بتایا جارہا ہے کہ طیارے میں آگ لگنے کے بعد پائلٹ نے کریش لینڈنگ کی کوشش کی تھی تاہم وہ کامیاب نہ ہوسکا۔ مقامی انتظامیہ کے ایک عہدیدار نے خبر ایجنسی اے ایف پی کو بتایا ہے کہ حادثے سے دبئی میں فضائی و زمینی آمدورفت پر کوئی فرق نہیں پڑا۔

Emirates Dubai Airport New Terminal

عینی شاہدین کے مطابق دبئی کے ہوائی اڈے سے پرواز بھرنے کے چند ہی لمحوں بعد طیارے میں آگ بھڑک اٹھی تھی

اطلاعات کے مطابق حادثے کا شکار ہونے والےا س طیارے میں کھلونے اور پلاسٹک سے بنی ہوئی دیگر چیزیں لدی ہوئی تھیں اور وہ جرمنی کے شہر کلون کے لئے روانہ ہوا تھا۔ امارات کی سرکاری خبر رساں ایجنسی WAM کی رپورٹ کے مطابق طیارے کے ملبے سے پائلٹ اور معاون پائلٹ کی لاشیں مل گئی ہیں۔ یو پی ایس، جوکہ دنیا کی سب سے بڑی پارسل سروس تصور کی جاتی ہے، نے تصدیق کی ہے کہ اس طیارے کا عملہ دو ہی افراد پر مشتمل تھا۔ فوری طور پر حادثے کا سبب معلوم نہیں ہوسکا ہے۔

ہوا بازی کے شعبے سے وابستہ ایک ماہر نے بتایا ہے کہ پرواز بھرنے کے فوری بعد جہاز میں تکنیکی خرابی ظاہر ہوگئی تھی، پائلٹ نے کریش لینڈنگ کی کوشش کی تاہم وہ طیارے کو حادثے کا شکار ہونے سے نہ بچا سکا۔

UPS Wagen und Mann mit Brief

یو پی ایس کا شمار دنیا بھر میں سامان کی ترسیل کرنے والے سر فہرست اداروں میں ہوتا ہے

خیال رہے کہ طیارہ، جس فوجی اڈے پر گرا اس کے آس پاس رہائشی بستی بھی موجود ہے اگر تو طیارہ وہاں گرتا تو زیادہ افراد کی جانیں ضائع ہوتیں۔ اسی بستی کی ایک رہائشی خاتون نے اے ایف پی کو بتایا کہ اس نے شعلوں میں لپٹے طیارے کو اپنی آنکھوں سے فضاء میں لڑکھڑاتے دیکھا اور اسے ایسا محسوس ہوا جیسے اس کے پیروں تلے زمین ہل رہی ہو۔

یو پی ایس میں بین الاقوامی آپریشنز کے مینیجر بوب لیکائٹس نے کہا ہے کہ ہر ممکن کوشش کرکے حادثے کا سبب معلوم کیا جائے گا۔ انہوں نے حادثے میں مارے جانے والے دونوں افراد کے اہل خانہ سے ہمدردی کا اظہار بھی کیا۔ اکتوبر 2009ء میں بھی سوڈان کا ایک مال بردار بوئنگ طیارہ شارجہ کے پاس حادثے کا شکار ہوا تھا جس میں عملے کے تمام چھ سوڈانی شہری مارے گئے تھے۔

رپورٹ : شادی خان سیف

ادارت : عاطف توقیر

DW.COM