1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی پابندی کے باوجود ایران نےبیلسٹک میزائل تجربہ کرلیا

ایران کی جانب سے ہفتے کے روز بتایا گیا ہے کہ اس نے دو ہزار کلومیٹر تک ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت کے حامل ایک بیلیسٹک میزائل کا تجربہ کیا ہے۔ جمعے کو اس میزائل کی نمائش ایک عسکری پریڈ میں بھی کی گئی تھی۔

گزشتہ روز ایرانی دارالحکومت تہران میں ہونے والی فوجی پریڈ میں پاسدارانِ انقلاب نے دو ہزار کلومیٹر تک نشانہ بنانے والے اِس بیلسٹک میزائل کو عوام کے سامنے پیش کیا تھا۔ عسکری پریڈ میں پاسداران انقلاب کے ایئر اسپیس شعبے کے سربراہ جنرل امیر علی حاجی زادہ نے اس بیلسٹک میزائل کا نام ’خُرم شہر‘ بتایا تھا۔

مقامی میڈیا پر ہفتے کے روز سامنے آنے والی رپورٹوں کے مطابق ’’خُرم شہر‘‘ کا تجربہ کامیاب رہا۔ اس تجربے پر واشنگٹن انتظامیہ نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔ امریکی حکام الزامات عائد کر چکے ہیں کہ ایرانی میزائل پروگرام خطے کی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔

ایران میزائل پروگرام پر سمجھوتہ نہیں کرے گا، حسن روحانی

ایرانی پارلیمان نے میزائل پروگرام کا بجٹ بڑھا دیا

ایران امریکا کشیدگی: تہران اپنے میزائل تجربات جاری رکھے گا

ایران کے سرکاری میڈیا نے اس تجربہ کے مناظر اور تصاویر بھی نشر کی ہیں، جن میں دو ہزار کلومیٹر تک ہدف کا نشانہ بنائے جانے والے  'خُرم شہر' میزائل کے کامیاب تجربے کے مناظر دیکھائے گئے۔ تاہم اس میزائل کے داغے جانے کے مقام یا اس تجربے کی تاریخ اور وقت کو ظاہر نہیں کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ جمعے کو ایرانی دارالحکومت تہران میں سن 1980 میں شروع ہونے والی ایران عراق جنگ کی یاد میں عسکری پریڈ کا انعقاد کیا گیا تھا۔

عسکری پریڈ کے موقع پر ایرانی صدر حسن روحانی نے اپنی تقریر میں  اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ ایران اپنے  میزائل پروگرام کو وسعت دیتا رہے گا۔ اس خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ ملکی دفاع پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔

Iran Raketenabschuss auf IS in Syrien (picture alliance/AP Photo/M Fakhrinejad)

ایرانی میڈیا پر میزائل تجربے کے مناظر نشر کیے گئے

ایران کی جانب سے یہ میزائل تجربہ ایک ایسے وقت پر کیا گیا ہے جب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے دوران ایران کے میزائل پروگرام کوشدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان کے مطابق  ایران اپنے میزائل کی صلاحیت کو بڑھا کر شام اور یمن میں تشدد کو فروغ دینا چاہتا ہے۔  سن 2015 میں ایران کے ساتھ امریکا  اور دیگر عالمی طاقتوں کے  مابین جوہری معاہدہ طے پایا تھا، جس کےتحت ایران کو اپنی جوہری سرگرمیوں محدود کرنے کے لیے کہا گیا تھا، جس کے بدلے میں ایران پر عائد بین الاقامی پابندیوں میں نرمی کا وعدہ کیا گیا تھا۔

امریکا ایران کے میزائل تجربات کو اس معاہدے کی روح کے منافی قرار دیتا ہے، تاہم تہران کا اصرار ہے کہ میزائل تجربات کا جوہری معاہدے سے کوئی تعلق نہیں۔

DW.COM