1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی وزیرِ خارجہ کا دورہِ جنوبی افریقہ

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن اور اُن کے جنوبی افریقی ہم منصب کے درمیان ہونے والی ملاقات میں کلنٹن نے دونوں ملکوں کے درمیان موجودہ تعاون کے جذبے پر اطمینان کا اظہار کیا ہے۔

default

امریکی وزیرِ خارجہ ہلیری کلنٹن

اِس ملاقات میں جنوبی افریقہ اور امریکہ اِس بات پر متفق ہوئے کہ زمبابوے میں پیدا شدہ بحرانی حالات میں بہتری لانے کے لئے اصلاحات کے عمل کو کسی بھی طور متعارف کروانا ضروری اور وقت کا تقاضا ہے۔ امریکہ، زمبابوے کے صدر رابرٹ موگابے کے سخت ناقدین میں شمار کیا جاتا ہے۔ امریکہ کی خواہش ہے کہ وزیر اعظم مورگن چوانگیرائی کی حکومت کے دوران کسی طور اصلاحات کے عمل کو شروع کیا جا سکے۔

Robert Mugabe Wahl Simbabwe

امریکہ اور یورپی یونین نے موگابے کے اثاثوں کو منجمد کرنے کے علاوہ اُن پر سفری پابندیاں بھی عائد کر رکھی ہیں

امریکہ اور یورپی یونین نے موگابے کے اثاثوں کو منجمد کرنے کے علاوہ اُن پر سفری پابندیاں بھی عائد کر رکھی ہیں۔ اِن پابندیوں کے زُمرے میں موگابے کی اہلیہ اور کئی قریبی ساتھی بھی شامل ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ نے پابندیوں کو درست قرار دینے کی وجہ بتاتے ہوئے کہا کہ اِن پابندیوں سے ایسے لیڈروں کے رویوں میں تبدیلی پیدا ہونے کے امکان کو سامنے رکھ کر فیصلہ کیا جاتا ہے۔

جنوبی افریقہ کے وزیر خارجہ نے تسلیم کیا کہ گزشتہ آٹھ سالوں میں امریکہ اور جنوبی افریقہ کے درمیان تعاون کا فقدان تھا لیکن اب آنے والے دنوں میں قریبی تعاون کی فضا پیدا کی جائے گی۔

ہلیری کلنٹن کو یقین ہے کہ زمبابوے کی اندرونی سیاسی اور سماجی صورت حال کو بہتر بنانے کے سلسلے میں جنوبی افریقہ ایک اہم کردار ادا کرنے کی پوزیشن میں ہے۔ اِس مناسبت سے اُن کا کہنا تھا کہ امریکہ اور جنوبی افریقہ مل کر ایک آزاد، خوشحال اور جمہوری زمبابوے کے لئے کام کر رہے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ نے زمبابوے میں عوامی سطح پر پیدا شدہ صورت حال سے نمٹنے کو امریکہ اور جنوبی افریقہ کے لئے مشکل قرار دیا ہے۔

Nelson Mandela

امریکی وزیرِ خارجہ نے سابق جنوبی افریقی صدر نیلسن مینڈیلا سے بھی ملاقات کی

ہلیری کلنٹن کے ساتھ جس انداز میں موجودہ جنوبی افریقہ کی حکومت بات کر رہی ہے وہ اِس کا عندیہ دے رہی ہے کہ پریٹوریا حکومت کی واشنگٹن کے ساتھ زمبابوے پر پالیسی میں تبدیلی پیدا ہو ئی ہے جو سابق صدر تھابو ایم بیکی اور جورج ڈبلیُو بُش کے دور میں جاری رکھی گئی تھی۔

دونوں ملکوں کے تجزیہ نگار اِس پر مُتفق ہیں کہ امریکہ اور جنوبی افریقہ کی حکومتیں موجودہ صدور باراک اوباما اور جیکب زوما کی قیادت میں دوطرفہ تعلُقات میں انتہائی گرم جوشی کی خواہشمند ہوتے ہوئے کئی عالمی معاملات پرمتفق ہونا چاہتی ہیں۔

گزشتہ روز ہلیری کلنٹن نے امریکی فنڈ سے چلنے والی ایڈز مرض کے کلینک کا معائنہ بھی کیا۔ اِس موقع پر جنوبی افریقہ کے وزیر صحت Aaron Motsoaledi سے ملاقات بھی کی۔ اِس کے علاوہ امریکی وزیر خارجہ نوبل انعام یافتہ لیڈر اور سابق صدر نیلسن مینڈیلا سے ذاتی ملاقات کے لئے بھی گئیں۔

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن ہفتہ کے دِن جنوبی افریقہ کے صدر جیکب زوما سے ملاقات کریں گی۔ جیک زوما نے جنوبی افریقہ کی صدارت مئی میں سنبھالی تھی۔ وہ تھابو ایم بیکی کے دور میں بھی موگابے کے حوالے سے سخت مؤقف کی پالیسی چاہتے تھے۔

امریکی وزیر خارجہ آج کل سات افریقی ملکوں کے دورے پر ہیں۔ وہ کینیا کا دورہ مکمل کرنے کے بعد اب جنوبی افریقہ میں ہیں۔

DW.COM