1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

امریکی مندوب جارج مچل کا دورہء مشرقِ وسطیٰ

مشرقِ وسطیٰ تنازعے کے حوالے سے امریکہ اور اسرائیل کے درمیان تعلقات سرد مہری کا شکار دکھائی دے رہے ہیں۔ اسرائیلی وزیرِ اعظم نتن یاہو جلد ہی اپنی حکومت کی پالیسی کا اعلان کرنے والے ہیں۔

default

جارج مچل کا کہنا ہے کہ واشنگٹن کے نزدیک مسئلے کا واحد حل آزاد فلسطینی ریاست کا قیام ہے

Obama Gesandter George Mitchell trifft Peres

جارج مچل نے اسرائیلی صدر شمعون پیریز سے بھی ملاقات کی

ان حالات میں امریکی مندوب برائے مشرقِ وسطیٰ جارج مچل کی اسرائیل آمد اہم قرار دی جا رہی ہے۔

امریکی مندوب برائے مشرقِ وسطیٰ جارج مچل کے دورہء اسرائیل کا مقصد بظاہر غربِ اردن میں اسرائیلی آبادیوں کے قیام کو روکنے کے حوالے سے امریکی صدر باراک اوباما کے بیانات سے پیدا ہونے والے امریکہ اسرائیل تناؤ کی شدّت کو کم کرنا ہے۔ اسرائیلی وزیرِ اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق امریکی ایلچی اور وزیرِ اعظم نتن یاہو کے درمیان دو گھنٹے تک جاری رہنے والی ملاقات دوستانہ اور مثبت تھی۔ تاہم بعض مبصرین کے لئے یہ امر انتہائی اہمیت کا حامل ہے کہ اسرائیلی حکومت کو اس ملاقات کے بارے میں یہ کہنا پڑا کہ یہ ’دوستانہ اور مثبت‘ ماحول میں ہوئی۔

Benjamin Netanjahu

اسرائیلی وزیرِ اعظم جلد ہی سیکیورٹی امور پر اپنی پالیسی کا اعلان کرنے والے ہیں


جارج مچل کے مطابق اوباما انتظامیہ کی خواہش ہے کہ شرقِ اوسط کے تنازعے کے حل کے حوالے سے عرب اسرائیل مذاکرات جلد از جلد شروع کیے جائیں اور اوباما انتظامیہ یہ بھی چاہتی ہے کہ مسئلے کا حل بھی جلد نکالا جائے۔ اس موقع پر امریکی سفیر نے اعلان کیا کہ وہ شام کا دورہ بھی کر رہے ہیں۔ یہ جارج مچل کا شام کا پہلا دورہ ہوگا۔

جارج مچل بدھ کے روز فلسطینی صدر محمود عبّاس اور وزیرِ اعظم سلام فیاض سے ملاقات کریں گے۔

Symbolbild Obama Besuch Nahost

اسرائیل کے شدّت پسند حلقے باراک اوباما کی مشرقِ وسطیٰ پالیسی کو فلسطینیوں کے حق میں قرار دے رہے ہیں


جارج مچل کا کہنا ہے کہ واشنگٹن کے نزدیک مسئلے کا واحد حل آزاد فلسطینی ریاست کا قیام ہے۔

واضح رہے کہ امریکی صدر باراک اوباما نے حالیہ چند ہفتوں کے دوران اسرائیل سے کئی بار مطالبہ کیا ہے کہ وہ فلسطین کے ’مقبوضہ‘ علاقوں میں اسرائیلی بستیوں میں توسیع کا سلسلہ فوری طور پر روک دے۔ دائیں بازو کی قیادت والی نو منتخب اسرائیلی حکومت اوباما کے اس مطالبے سے زیادہ خوش نہیں ہے۔ اسرائیلی وزیرِ اعظم بنیامن نتن یاہو چند دنوں میں سیکیورٹی امور کے حوالے سے اپنی کابینہ کی پالیسی کا باضابطہ اعلان کریں گے۔

باوجود اس کے کہ اسرائیل کے دورے کے موقع پر امریکی ایلچی جارج مچل نے اسرائیل کی سلامتی کے حوالے سے امریکی حکومت کی غیر مشروط حمایت کا بارہا ذکر کیا، مبصرین کے مطابق امریکہ اور اسرائیل کے درمیان تعلقات اپنی بہترین سطح پر نہیں ہیں۔ نتن یاہو کے پالیسی بیان سے اس امر کی تصدیق یا نفی ہونے کا امکان ہے۔

DW.COM