1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی فوج کے نامزد سربراہ کا ایران کو انتباہ

امریکی فوج کے نامزد سربراہ نے منگل کے روز ایران کو متنبہ کیا ہے کہ وہ ایٹمی ہتھیاروں کی کوششیں اور عراق میں حملوں کی پشت پناہی ترک کردے۔ جنرل مارٹن ڈیمپسی کے بقول اس میں ناکامی ایران کی بڑی غلطی ہوگی۔

جنرل مارٹن ڈیمپسی

جنرل مارٹن ڈیمپسی

جنرل مارٹن ڈیمپسی نے اپنی تعیناتی کی توثیق کے لیے ہونے والی پیشی کے موقع پر اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ دنیا کی طاقتور ترین فوج کو بدلتے عالمی حالات اور بجٹ میں ہونے والی کمی کے باوجود بہترین انداز سے چلانے کی بھرپور کوشش کریں گے۔ انہوں نے اس موقع یہ عزم بھی ظاہر کیا کہ وہ افغانستان سے امریکی افواج کی واپسی کے احکامات پر عملدرآمد کریں گے اور عسکریت پسندوں کے خلاف کارروائی کے حوالے سے پاکستان پر دباؤ برقرار رکھیں گے۔

امریکی کانگریس کی آرمڈ سروسز کمیٹی کے سامنے اپنے بیان میں امریکی افواج کے نئے چیفس آف اسٹاف نے ایران کی مذہبی حکومت کو ’غیر مستحکم کرنے والی قوت‘ قرار دیا۔ ان کا کہنا تھا: ’’ اپنی جوہری سرگرمیوں اور جنوبی عراق میں اپنی درپردہ کارروائیوں کے تناظر میں اس بات کے قوی امکانات ہیں کہ ایران ان حوالوں سے امریکی عزم کا غلط اندازہ لگائے گا۔‘‘

امریکی فوج کی طرف سے پاکستان پر دباؤ آئندہ بھی برقرار رکھا جائے گا، جنرل مارٹن ڈیمپسی

امریکی فوج کی طرف سے پاکستان پر دباؤ آئندہ بھی برقرار رکھا جائے گا، جنرل مارٹن ڈیمپسی

جنرل ڈیمپسی کے مطابق ایران ممکنہ طور پر عراق میں ’بیروت کی طرح کی تحریک‘ کے لیے کوشاں ہے۔ ان کا اشارہ 1983ء میں لبنانی دارالحکومت بیروت میں امریکی اور فرانسیسی فوجوں کے خلاف ہلاکت خیز حملوں کی طرف تھا، جن کی ذمہ داری ایران سے تعلق رکھنے والے اسلامی عسکریت پسندوں نے قبول کی تھی۔

جنرل ڈیمپسی کا کہنا تھا کہ ایران شاید یہ پیغام دینا چاہتا ہے کہ اس نے ہمیں عراق سے نکال دیا ہے۔ ڈیمپسی کے بقول:’’ جب تک ہمارے فوجی وہاں پر ہیں، ہم ان کے تحفظ کے لیے وہ سب کچھ کریں گے جو ہمیں کرنا چاہیے، اور میں یہ بات ہر ایک پر واضح کر دینا چاہتا ہوں۔‘‘ امریکہ عراق میں موجود اپنے باقی ماندہ 47 ہزار فوجیوں کو رواں برس کے اختتام تک عراق سے واپس نکالنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

ایڈمرل مائیک مولن کے جانشین جنرل مارٹن ڈیمپسی نے اس موقع پر کہا ہے کہ امریکی فوج کی طرف سے پاکستان پر دباؤ آئندہ بھی برقرار رکھا جائے گا۔ سینیٹ کی آرمڈ فورسز کمیٹی کے سامنے پیشی کے دوران انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ جوائنٹ چیفس آف سٹاف کا چیئر مین بننے کے بعد ان کی ترجیح ہو گی کہ پاکستان پر عسکریت پسندوں کے خلاف زیادہ سے زیادہ مؤثر کارروائیوں کے لیے دباؤ جاری رکھا جائے۔

رپورٹ: افسر اعوان

ادارت: کِشور مُصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس