1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی صدر کے نئے ایگزیکٹو آرڈر کو دوبارہ عدالتی چیلنج کا سامنا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے چھ مسلمان ملکوں کے لیے سفری پابندیوں کے ایگزیکٹو آرڈر کے خلاف ہوائی کے بعد کم از کم تین دوسری ریاستیں بھی عدالت میں اپیل دائر کر رہی ہیں۔

واشنگٹن ریاست کے اٹارنی جنرل  باب فرگوسن کے مطابق نیویارک کی ریاست بھی عدالتی کارروائی میں شریک ہونا چاہتی ہے۔ اوریگن اور مینیسوٹا کی ریاستوں کو واشنگٹن کے جج نے عدالت میں اپیل کا حصہ بننے کی اجازت دے دی ہے۔ اسی طرح میسا چوسٹس کے اٹارنی جنرل نے بھی ایگزیکٹو آرڈر کے خلاف شروع ہونے والی عدالتی کارروائی کا حصہ بننے کا عندیہ دیا ہے۔

 ٹرمپ کے پہلے سفری پابندیوں کے حکم نامے کو سب سے پہلے واشنگٹن ریاست نے ہی چیلنج کیا تھا اور جج جیمز روبارٹ نے اُسے معطل کر دیا تھا۔ اس مرتبہ بھی یہی جج دائر کی گئی اپیل کی سماعت کر رہے ہیں۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے پیر چھ مارچ کو دستخط کردہ نئے صدارتی حکم نامے میں سے عراق کا نام خارج کر دیا گیا تھا۔ نئے حکم نامے میں اب چھ مسلم اکثریتی ممالک ایران، لیبیا، شام، صومالیہ، سوڈان اور یمن شامل ہیں۔ ان  ممالک کے شہریوں پر اگلے 90 دن کے لیے امریکا میں داخلے پر پابندی عائد کی گئی ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 20 جنوری کو عہدہ صدارت سنبھالا تھا۔ اس کے صرف ایک ہفتہ بعد یعنی ستائیس جنوری کو انہوں نے ایک صدارتی حکم نامہ جاری کیا تھا، جس میں سات مسلم اکثریتی ممالک کے شہریوں کے امریکا میں داخلے پر پابندی عائد کر دی گئی تھی، جن میں عراق بھی شامل تھا۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے جنوری میں جاری کردہ ایگزیکٹو آرڈر کے بعد امریکا کے درجنوں بین الاقوامی ہوائی اڈوں پر اس وقت انتہائی پریشان کن صورت حال پیدا ہو گئی تھی، جب باقاعدہ ویزا لے کر آنے والے ہزاروں غیر ملکیوں کو امریکا میں داخلے کے اجازت دینے سے انکار کر دیا گیا تھا۔ تب امریکا کے مختلف شہروں میں صدر ٹرمپ کے خلاف مظاہرے بھی شروع ہو گئے تھے۔ اس کے علاوہ دنیا بھر سے اس فیصلے پر شدید تنقید بھی دیکھنے میں آئی تھی۔

ابتدائی حکم نامے کے ردعمل میں امریکا کی مختلف عدالتوں میں قریب دو درجن مقدمات درج کرائے گئے تھے۔ تین فروی کو ایک امریکی عدالت نے ڈونلڈ ٹرمپ کے اس فیصلے کو کالعدم قرار دیتے ہوئے ایسے افراد کو امریکا میں داخلے کی اجازت دے دی تھی، جو ہوائی اڈوں پر پھنسے ہوئے تھے۔

امریکی محکمہ انصاف کے اندازوں کے مطابق ابتدائی پابندی کے سبب قریب 60 ہزار افراد کو جاری کردہ ویزے معطل کر دیے گئے تھے۔