1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’امریکی رکنِ کانگریس سنبھل رہی ہیں‘

امریکہ میں گولی لگنے سے زخمی ہونے والی رکنِ کانگریس گیبریئل گیفورڈز کی حالت پر ڈاکٹروں نے اطمینان ظاہر کیا ہے۔ تاہم انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ گیفورڈز کی حالت تاحال تشویشناک ہے اور اس وقت کچھ بھی کہنا قبل ازوقت ہوگا۔

default

رکنِ کانگریس گیبریئل گیفورڈز

ڈاکٹروں نے بتایا ہے کہ گیفورڈز کا آپریشن کیا گیا ہے، جس کے بعد ان کی جانب سے ردِعمل سامنے آ رہا ہے۔ ڈاکٹروں نے کہا کہ اس پر وہ مطمئن تو ہیں لیکن ان کا یہ اطمینان محتاط ہے۔

ایریزونا یونیورسٹی میڈیکل سینٹر میں ڈاکٹروں نے کہا کہ گیفورڈز کے سر میں لگنے والی گولی، ان کے دماغ کے صرف ایک مقدم خانے می داخل ہوئی۔ انہوں نے بتایا کہ آپریشن کے ذریعے سب سے پہلے بہتے ہوئے خون کو روکا گیا۔ ڈاکٹروں نے یہ بھی کہا کہ نتائج حوصلہ افزا ہیں۔

بتایا گیا ہے کہ زخمیوں میں سے پانچ کی حالت تاحال تشویشناک ہے جبکہ ایک کو علاج کے بعد فارغ کر دیا گیا ہے۔

حملہ ‌آور 22 سالہ جیرڈ لوفنیر کو فینکس کی عدالت میں پیر کو پیش کیا جا رہا ہے۔ اس کے گھر کی تلاشی لی گئی ہے، جہاں سے ملنے والے تحریری پیغامات میں ’منصوبہ‘، ’قتل‘ اور گیفورڈز‘ کے الفاظ ملے ہیں۔

امریکی صدر باراک اوباما نے اپنے عوام سے کہا ہے کہ وہ پیر کو عالمی وقت کے مطابق شام چار بجے’ایک لمحے کے لیے خاموشی‘ اختیار کریں۔ ہفتہ کو ایک بیان میں باراک اوباما نے اس واقعے کو ملک بھر کے لئے ایک المیہ قرار دیا تھا جبکہ امریکہ میں دیگر سیاستدانوں نے بھی اس پر دُکھ کا اظہار کیا ہے۔

ایف بی آئی کے ڈائریکٹر رابرٹ میولر نے فائرنگ کے اس واقعے کو امریکی اداروں اور طرز زندگی پر حملہ قرار دیا ہے۔

Anschlag Arizona USA Gabrielle Giffords

ہسپتال کے باہر گیفورڈز کی خیریت چاہنے والوں کا شمع بردار اجتماع

چالیس سالہ گیفورڈز ایریزونا کے شہر ٹوسون میں ہفتہ کو گولی لگنے سے زخمی ہو گئی تھیں جبکہ دیگر چھ افراد ہلاک ہوئے تھے۔ مرنے والوں میں ایک نو سالہ بچی، وفاقی جج جان رول اور گیفورڈز کے ایک سیاسی معاون بھی شامل ہیں۔

یہ حملہ ہفتہ کو عالمی وقت کے مطابق شام پانچ بجے اُس وقت ہوا، جب گیفورڈز ایک سپرمارکیٹ کے باہر ایک ’کھلی کچہری‘ میں شریک تھیں۔

عینی شاہدین کے مطابق حملہ آور گیفورڈز کے پاس پہنچا اور اس نے انہیں بہت قریب سے نشانہ بنایا، پھر اس نے اِدھر اُدھر اندھا دُھند فائرنگ کی۔ وہ بندوق ری لوڈ کرنے کے لیے رکا تو ہجوم نے اس پر قابو پا لیا۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس