1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی رپورٹ پر چین برہم

چین نے امریکی محکمہ دفاع کی طرف سے چین کی فوجی قوت پر جاری کی جانے والی سالانہ رپورٹ کی یہ کہتے ہوئے مذمت کی ہے کہ اس نے باہمی اعتماد کو ’شدید نقصان‘ پہنچایا ہے۔

امریکی محکمہ دفاع کی جانب سے ملکی کانگریس میں جمعہ 13 مئی کو ایک رپورٹ پیش کی گئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ چین مصنوعی طور پر بنائے جانے والے جزیروں پر متوقع طور پر رواں برس ملٹری انفراسٹرکچر تعمیر کرنے جا رہا ہے جس میں مواصلات اور نگرانی کے نظام شامل ہیں۔

خبر رساں ادراے روئٹرز کے مطابق چینی وزارت دفاع کے ترجمان ژینگ ژُوجُن نے پینٹاگون کی رپورٹ پر ’سخت ناراضی‘ اور ’مضبوط مخالفت‘ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس رپورٹ نے ’باہمی اعتماد کو سخت نقصان‘ پہنچایا ہے۔ روئٹرز نے یہ بات چین کی سرکاری نیوز ایجنسی شنہوا کے حوالے سے بتائی ہے۔

ژینگ کا کہنا تھا کہ اس رپورٹ میں چین کے فوجی خطرے کو ’بڑھا چڑھا‘ کر پیش کیا گیا ہے جبکہ چینی دفاعی پالیسیوں میں عدم شفافیت کو ’جانتے بوجھتے مسخ‘ اور مشرقی اور جنوبی بحیرہ چین میں چین حکومتی کارروائیوں کو ’غیر منصفانہ‘ انداز میں پیش کیا گیا ہے۔

چینی وزارت دفاع کے ترجمان کے مطابق، ’’چین ایک قومی دفاعی پالیسی پر عمل کرتا ہے جو نوعیت کے حوالے سے دفاعی یا بچاؤ کی پالیسی ہے۔‘‘ ان کا مزید کہنا تھا کہ چین کی فوجی قوت میں اضافہ اور اصلاحات کا مقصد ملکی خودمختاری، سلامتی اور سرحدی سالمیت کے علاوہ چین کی پر امن ترقی کو یقینی بنانا ہے۔

اس رپورٹ نے ’باہمی اعتماد کو سخت نقصان‘ پہنچایا ہے، ژینگ ژُوجُن

اس رپورٹ نے ’باہمی اعتماد کو سخت نقصان‘ پہنچایا ہے، ژینگ ژُوجُن

ژینگ ژُوجُن کا مزید کہنا تھا کہ یہ دراصل امریکا ہی ہے جو ہمیشہ مشکوک رہا ہے اور اس علاقے میں بار بار ملٹری ہوائی جہاز اور جنگی بحری جہاز بھیج کر فوجی طاقت کا اظہار کرتا رہتا ہے۔ فوجی ترجمان کے مطابق امن کی بحالی اور حرکت کرنے کی آزادی کے لیے درخواستوں کے باوجود امریکا ہی دراصل جنوبی بحیرہ چین میں عسکریت پسندی کو ہوا دے رہا ہے جس کا مقصد اس علاقے میں اپنا غلبہ قائم کرنا ہے۔

روئٹرز کے مطابق پینٹاگون کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ منصوبہ بندی کے ساتھ فوجی انفراسٹرکچر کے اضافے سے چین کو متنازعہ پانیوں میں طویل المدتی ’سول ملٹری بیسز‘ حاصل ہو جائیں گی۔ اس رپورٹ میں اندازہ لگایا گیا ہے کہ چین کی طرف سے مصنوعی طور پر جزیرے حاصل کرنے سے 3200 ایکڑ زمین حاصل ہو گئی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ چین نے سات مختلف جزیروں پر زمین حاصل کرنے کا کام گزشتہ برس اکتوبر میں مکمل کر لیا تھا جس کے بعد اب اس کی توجہ وہاں انفراسٹرکچر کی تیاری پر ہے جس میں تین کلومیٹر طویل ایک ایئر اسٹرپ بھی شامل ہے۔