1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکی تاریخ میں ’فائرنگ کا ایک بدترین واقعہ‘، پچاس ہلاک

امریکی ریاست فلوریڈا کے ایک نائٹ کلب پر حملے کے نتیجے میں ہلاک شدگان کی تعداد پچاس ہو گئی ہے۔ 53 زخمی افراد کو طبی امداد پہنچائی جا رہی ہے جبکہ متعدد زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے۔ امریکی صدر نے اس حملے کی شدید مذمت کی ہے۔

امریکی ریاست فلوریڈا کے شہر اورلینڈو میں واقع پلس نامی ایک نائٹ کلب میں فائرنگ کے نتیجے میں پچاس افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق کر دی گئی ہے۔

میئر بڈی ڈائر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ترپن زخمی افراد میں سے متعدد کی حالت نازک ہے۔

ڈائر نے فائرنگ کے اس بہیمانہ واقعے کو ’ناقابل یقین‘ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے گورنر سے درخواست کر دی ہے کہ ریاست میں ہنگامی حالت نافذ کر دی جائے۔

بتایا گیا ہے کہ فائرنگ شروع ہونے کے بعد کلب میں موجود تیس افراد کو کامیاب طریقے سے نکال بھی لیا گیا تھا۔

USA Schießerei in Orlando zahlreiche Tote

فائرنگ شروع ہونے کے بعد کلب میں موجود تیس افراد کو کامیاب طریقے سے نکال بھی لیا گیا

ہفتے کی شب ہم جنس پرستوں میں مقبول پلس نائٹ کلب میں فائرنگ کرنے والے کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ وہ افغان نژاد امریکی شہری تھا۔ پولیس کے مطابق حملہ آور بھی ہلاک ہو چکا ہے۔

حملہ آور کا نام عمر متین بتایا گیا ہے۔ ایسے خدشات ظاہر کیے جا رہے ہیں کہ یہ ’مسلم انتہا پسندانہ کارروائی بھی ہو سکتی ہے۔

اورلینڈو کی پولیس نے بتایا ہے کہ ایک ہنگامی سیل قائم کر دیا گیا ہے، جہاں لوگوں کو مطلوبہ معلومات فراہم کی جا رہی ہیں۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق متعدد لاشیں ابھی تک کلب کے اندر ہی موجود ہیں، جنہیں نکالنے میں وقت درکار ہو گا۔

مقامی پولیس نے کہا ہے کہ شہر کی صورتحال قابو میں ہے اور لوگوں کو خوفزدہ ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔

اورلینڈو پولیس کے سربراہ جان مینا نے بتایا ہے کہ حملہ آور AR-15 طرز کی حملہ آور گن سے لیس تھا، جس نے کلب میں داخل ہوتے ہی فائرنگ کر دی۔ انہوں نے کہا کہ یہ حملہ اس نے اکیلے ہی کیا۔

تحقیقاتی افسران نے ابتدائی رپورٹ میں کہا ہے کہ یہ کارروائی ’داخلی دہشت گردی‘ کے تناظر میں پرکھی جا رہی ہے لیکن ایسے امکانات کو نظر انداز نہیں کیا جائے گا کہ کہیں حملہ آور ریڈیکلائزڈ تو نہیں ہو چکا تھا۔

ایف بی آئی نے کہا ہے کہ حملہ آور کی شناخت ہو چکی ہے اور اس کے گھر والوں کو بنیادی معلومات فراہم کرنے کے بعد اس کی شناخت ظاہر کی جائے گی۔

تاہم امریکی میڈیا رپورٹوں کے مطابق حملہ آور افغان مسلمان عمر متین تھا، جس کی عمر انتیس برس تھی۔ ایسی خبریں بھی گردش کر رہی ہیں کہ اس کا رحجان ’اسلامی شدت پسندی‘ کی طرف مائل تھا۔

امریکی صدر باراک اوباما نے اس حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ وفاقی حکومت اس واقعے کی تحقیق اور مکمل چھان بین کے لیے فلوریڈا کی ریاستی حکومت کو ہر ممکن تعاون فراہم کرے گی۔

وائٹ ہاؤس کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ اس کیس کی تحقیقات کے حوالے سے صدر اوباما کو مسلسل باخبر رکھا جا رہا ہے۔