1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

امریکی این جی او پر مہاجرین کے جنسی استحصال کا الزام

یونان کے مقامی میڈیا کے مطابق ایتھنز حکام ایک امریکی غیر سرکاری امدادی تنظیم کے دو ملازمین کی جانب سے مہاجرین کے جنسی استحصال کے الزامات کی چھان بین کر رہے ہیں۔ انسانی امور کے یورپی کمیشن نے تنظیم کی فنڈنگ معطل کر دی ہے۔

انسانی اُمور سے متعلق یورپی کمیشن کا کہنا ہے کہ امریکی امدادی ادارے مرسی کورپس پر عائد ان الزامات کو بہت سنجیدگی سے لیا گیا ہے اور ادارے کی فنڈنگ معطل کر دی گئی ہے۔ خود مرسی کورپس نے بھی یونان میں اپنے عملے کے دو ارکان کے خلاف داخلی طور پر چھان بین کرنے کا اعلان کیا ہے۔

 امریکی امدادی تنظیم کا کہنا  ہے کہ اُس کے دونوں ملازمین کے خلاف الزامات کا پتہ چلنے کے بعد دونوں کو تنخواہ کے ساتھ عارضی تعطیل پر بھیج دیا گیا ہے۔ مرسی کورپس کے دو ملازمین کی جانب سے تارکین وطن کے جنسی استحصال کے الزامات پہلی مرتبہ مئی کے وسط میں انسانی ا مور کے کمیشن کی جانب سے سامنے آئے تھے تاہم اُس وقت کمیشن نے امدادی تنظیم کا نام ظاہر نہیں کیا تھا۔ سولہ مئی کو جاری ایک بیان میں کمیشن کی جانب سے کہا گیا تھا کہ فی الحال یہ محض الزامات ہیں جن کی چھان بین کی جا رہی ہے۔

 بیان میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ الزامات کا تعلق صرف جنسی استحصال سے نہیں بلکہ ان میں کرپشن بھی شامل ہے۔ دوسری جانب مرسی کورپس نے کہا ہے،’’ اس تمام صورتِ حال کو بہت سنجیدگی سے دیکھا جا رہا ہے اور ہم نے نہ صرف یونانی حکام کو بلکہ تنظیم کو عطیے دینے والوں کو بھی اس معاملے سے آگاہ کر دیا ہے۔‘‘

مرسی کورپس اُن متعدد غیر سرکاری تنظیموں میں سے ایک ہے جو یونان میں پھنسے ایسے ہزاروں تارکین وطن کو معاونت فراہم کر رہی ہیں جن کے لیے یورپ جانے کے راستے مسدود ہو گئے ہیں۔

DW.COM