1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

امریکہ: کینسر کے سبب ہونے والی اموات میں بدستور کمی

امریکی کی کینسر سوسائٹی نے اپنی تازہ ترین رپورٹ میں یہ انکشاف کیا ہے کہ امریکہ میں سرطان کے عارضے کا شکار ہو کر ہلاک ہونے والوں کی شرح میں مسلسل کمی واقع ہو رہی ہے اور معاشرے کے ہر طبقے کو اس سے فائدہ پہنچ رہا ہے۔

default

شراب اور تمباکو نوشی سرطان کی بڑی وجہ

ان نئے اندازوں کے مطابق امریکہ میں مجموعی طور پر کینسر کے 1,596,670 نئے کیسس کا پتہ لگا ہے جبکہ 2011ء میں اب تک 571,950 امریکی باشندے سرطان کا شکار ہو کر لقمہ اجل بنے ہیں۔ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق امریکہ میں 2001ء سے لے کر2007ء تک کینسر کی مختلف اقسام کے سبب ہونے والی مردوں کی اموات کی شرح میں سالانہ 1.9 فیصد کمی آئی، جبکہ عورتوں میں یہ شرح 1.5 فیصد ریکارڈ کی گئی۔

Symbolbild Lungenkrebs

امریکہ میں مردوں میں پھیپھڑے کے سرطان کی شرح میں کمی آئی ہے

کینسر سے متعلق اس سالانہ رپورٹ سے یہ انکشاف بھی ہوا ہے کہ اعلیٰ تعیلم یافتہ امریکی باشندوں کے مقابلے میں بہت معمولی تعلیم حاصل کرنے والے امریکیوں کے اندر کینسر میں مبتلا ہو کر ہلاک ہونے کے امکانات دوگنا ہوتے ہیں۔ امریکہ میں 1998ء سے اب تک مختلف نسلی گروپوں سے تعلق رکھنے والے مردوں اور خواتین میں کسی بھی قسم کے سرطان میں مبتلا ہو کر مرنے کی شرح میں کمی واقع ہوئی ہے۔ تاہم بھارتی نسل سے تعلق رکھنے والے امریکیوں اورالاسکا کی باشندہ مگر امریکہ میں آباد خواتین میں کینسر میں مبتلا ہو کر جان سے ہاتھ دھو بیٹھنے والیوں کی شرح میں کوئی فرق دیکھنے میں نہیں آیا۔

سیاہ فام اور ہسپانوی نژاد مردوں میں سالانہ بنیادوں پر سرطان کے سبب ہونے والی اموات میں سب سے زیادہ کمی واقع ہوئی ہے۔ 1998 ء سے اب تک سیاہ فام مردوں میں یہ شرح 2.6، جبکہ ہسپانوی نژاد مردوں میں یہ شرح 2.5 فیصد ریکارڈ کی گئی۔

Cancer Survivor's Day in Indien

بھارت میں کینسر کی وجوہات میں سے ایک ماحولیاتی آلودگی ہے

تازہ ترین رپورٹ سے یہ بھی پتہ چلا ہے کہ امریکہ میں خواتین میں پھیپھڑوں کے سرطان کے کیسوں میں بھی کمی رونما ہوئی ہے جبکہ 1930ء سے اس میں تیزی سے اضافہ ہوا تھا۔ اطلاعات کے مطابق پھیپھڑے کے سرطان کے شکار مردوں کی شرح میں کمی ایک دہائی پہلے سے شروع ہوئی تھی۔ اس سے یہ اندازہ ہوتا ہے کہ امریکہ میں خواتین نے تمباکو نوشی مردوں کے مقابلے میں نسبتاً دیر سے شروع کی تھی۔ ایک اندازے کے مطابق امریکہ میں عورتوں نے تمباکو نوشی گزشتہ صدی کے اواخر میں شروع کی۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس