1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکہ کو مصری اہلکاروں کے اثاثے منجمد کر نےکی درخواست

مصر کی نئی عبوری حکومت نے واشنگٹن حکومت سے یہ باقاعدہ درخواست کی ہے کہ سابق صدر حسنی مبارک کے لیے کام کرنے والے سرکاری حکام کے امریکہ میں تمام اثاثے منجمد کر دیے جائیں۔

default

ایک سینیئر امریکی اہلکار نے اس بارے میں پیر کے روز ایک بیان دیا۔ نام نہ بتانے کی درخواست پر اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ایک اہلکار نے میڈیا کو بتایا کہ واشنگٹن کو ابھی تک قاہرہ میں نئی حکومت کی طرف سے ایسی کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی، جس میں یہ اپیل کی گئی ہو کہ امریکہ میں حسنی مبارک کے تمام اثاثے بھی منجمد کر دیے جائیں۔

امریکی وزارت خارجہ نے قاہرہ میں فوج کی قیادت میں کام کرنے والی نئی عبوری حکومت کی طرف سے اس درخواست کے موصول ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔

خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کوعبوری مصری حکومت کی طرف سے جو درخواستیں ملی ہیں، ان میں مبارک انتظامیہ کے کئی سرکردہ اہلکاروں کی امریکہ میں جملہ املاک کو منجمد کر دینے کی بات کی گئی ہے۔

Tahrir-Platz in Kairo Ägypten nach Rücktritt Mubaraks Flash-Galerie

مبارک کےتیس سالہ دوراقتدارکو ختم کرانے میں عوامی احتجاج نے بھرپور کردار ادا کیا

مصر میں سابق صدر حسنی مبارک کی حکومت میں شامل اہلکاروں کے یورپی ملکوں میں رکھے گئے اثاثوں پر ابھی حال ہی میں برسلز میں یورپی یونین کے وزرائے خزانہ کے ایک اجلاس میں بھی تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

اس اجلاس میں برطانیہ، جرمنی اور فرانس کے وزرائے خارجہ نے تصدیق کی تھی کہ نئی قاہرہ حکومت نے ان یورپی ملکوں سے یہ درخواست کر دی ہے کہ وہاں مبارک دور کے اعلیٰ حکومتی اہلکاروں کی ہر قسم کی املاک کو منجمد کر دیا جائے، اور ان کی خرید و فروخت کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: کشور مصطفٰی

DW.COM

ویب لنکس