1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکہ پہنچنے والی تمام پروازوں کے لئے سیکیورٹی مزید سخت

دنیا بھر سے امریکہ پہنچنے والی تمام پروزاوں کے لئے سیکیورٹی اب مزید سخت کر دی گئی ہے جبکہ بعض مخصوص ممالک سے آنے والے مسافروں کو امریکی ایئرپورٹس پر سیکیورٹی کے زیادہ سخت مرحلے سے گزرنا ہوگا۔

default

یہ اقدامات ڈیٹرائٹ کے حملے کی ناکام کوشش کے تناظر میں کئے گئے ہیں۔ دوسری جانب امریکہ اور برطانیہ نے یمن میں اپنے سفارت خانے عارضی طور پر بند کر دیے ہیں۔ وائٹ ہاؤس نے یمن میں القاعدہ کے بڑھتے ہوئے دائرہ کار پر زبردست تشویش ظاہر کی ہے۔ یمن میں مبینہ طور پر سرگرم ایک شدت پسند گروہ نے کرسمس کے روز ناکام ڈیٹرائٹ حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

Delta in Detroit / Terror / Northwest

نارتھ ویسٹ ایئرلائنز کا متاثرہ طیارہ

دہشت گردی پر قابو پانے سے متعلق امور پر امریکی صدر باراک اوباما کے مشیر جان برینّن نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ القاعدہ کے عسکریت پسند یمن کے دارالحکومت صنعاء میں مغربی اہداف کو نشانہ بنانے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔ برینّن کو خدشہ ہےکہ شدت پسندوں کا ہدف امریکی سفارت خانہ بھی ہو سکتا ہے۔ برینّن کے مطابق یمن میں القاعدہ کے سینکڑوں شدت پسند موجود ہیں۔

برطانیہ نے بھی انہی وجوہات کی بناء پر صنعاء میں اپنا سفارت خانہ بند کر دیا ہے۔ امریکہ اور برطانیہ، دونوں نے تاہم یہ نہیں بتایا کہ سفارت خانے کب دوبارہ کھولے جائیں گے۔

اس سے قبل امریکہ اور برطانیہ نے صومالیہ اور یمن میں القاعدہ کے خلاف کارروائیاں تیز کرنے کا عندیہ دیا تھا۔ اسی حوالے سے لندن اور واشنگٹن حکومتیں یمن میں پولیس کے ایک خصوصی یونٹ کے لئے مالی وسائل فراہم کرنے کا ارادہ بھی ظاہر کر چکی ہیں۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ واشنگٹن انتظامیہ کو یمن میں القاعدہ کے بڑھتے ہوئے اثر پر زبردست تشویش لاحق ہے۔ تاہم پاکستان اور افغانستان کی طرح دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اسے مرکزی محاذ کی حیثیت حاصل نہیں ہے۔

دریں اثناء امریکہ پہنچنے والی تمام پروازوں کے لئے سیکیورٹی اب مزید سخت کر دی گئی ہے جبکہ

John Brennan Bildergalerie Kabinett

جان برینّن

افغانستان، لیبیا، نائجیریا، پاکستان، صومالیہ اور یمن سمیت 14 ممالک سے آنے والے مسافروں کو امریکی ایئرپورٹس پر سیکیورٹی کے زیادہ سخت مراحل سے گزرنا ہو گا۔کیوبا، ایران، سوڈان اور شام بھی دہشت گردی کی بلیک لِسٹ یعنی سیاہ فہرست میں شامل ہیں۔ بقیہ چار ممالک کے نام ظاہر نہیں کئے گئے ہیں۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ نئے اقدامات سیکیورٹی امور کو دُوررس اور پائیدار بنانے کے لئے اختیار کئے جا رہے ہیں۔

ادھر برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن اپنے ایک بیان میں یہ کہہ چکے ہیں کہ یمن میں ’انتہاپسندی‘ کے خاتمے پر ایک بین الاقوامی کانفرنس منعقد کی جانی چاہیے۔ براوٴن نے یہ کانفرنس اٹھائیس جنوری کو لندن میں منعقد کرنے کی تجویز پیش کی ہے۔ اسی روز وہاں افغانستان کے مسئلے پر بھی ایک یورپی اجلاس ہو رہا ہے۔

رپورٹ: ندیم گل

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM