1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکہ میں جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانے کے جال کی تجویز

امریکہ کے ایک وفاقی پینل نے جمعے کو اپنی ایک تجویز میں کہا ہے کہ جب تک ملک میں جوہری فضلے کو دفن کرنے کے لیے مستقل جگہوں کا قیام نہیں ہو جاتا، اس وقت تک اس فضلے کو عارضی جگہوں پر ٹھکانے لگایا جا سکتا ہے۔

default

امریکہ میں جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانے کے حوالے سے بحث کئی دہائیوں سے چل رہی ہے تاہم جاپان کے فوکوشیما جوہری پلانٹ کو پیش آنے والے حادثے کے بعد امریکہ میں جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانے کے سلسلے میں بحث ایک بار پھر شدت اختیار کر گئی ہے۔

امریکی کانگریس کی جانب سے ایک قانون منظور کیا گیا تھا، جس کے تحت ایٹمی فضلے کو نیوادا کے یوکا پہاڑی سلسلے کی گہرائی میں دفن کیا جانا تھا، تاہم اوباما حکومت کو اس سلسلے میں شدید تنقید اور اپوزیشن کے بعد اس منصوبے کو روکنا پڑا۔ اس سلسلے میں یہ وفاقی پینل ترتیب دیا گیا تھا، جو تمام تر حقائق کو سامنے رکھتے ہوئے سفارشات مرتب کرے تاکہ کوئی نئی حکمت عملی طے کی جاسکے۔

Castortransport Gorleben

جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانا ہمیشہ سے ایک مسئلہ رہا ہے

اس پینل کے مطابق کچھ کمیونٹیز ایٹمی فضلے کو اگلے 100 برسوں تک اپنے ہاں کسی مقام پر دفن کرنے پر آمادہ تو ہیں، تاہم اس کے عوض وہ بہت سی مراعات اور بھاری سرمایہ کاری کا تقاضا کر رہی ہیں، جس کے لیے مذاکرات کی ضرورت ہے۔

اس پینل کی طرف سے پیش کردہ سفارشات میں امریکی کانگریس کو یہ مشورہ بھی دیا گیا ہے کہ جوہری فضلے کو ٹھکانے لگانے کے لیے ایک آزاد ایجنسی قائم کی جائے، تو جوہری فضلے کو اپنے ہاں جگہ دینے پر آمادہ کمیونیٹیز کے ساتھ قریبی سطح پر بات چیت کے عمل کو آگے بڑھائیں۔

واضح رہے کہ امریکی جوہری توانائی کے حوالے سے دنیا کا سب سے بڑا ملک ہے، جہاں سن 1950ء میں ملک کا پہلا جوہری توانائی پلانٹ قائم کیا گیا تھا۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : امتیاز احمد

DW.COM