1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکہ اسرائیل تعلقات میں تبدیلی کے آثار

امریکہ مشرق وسطیٰ میں اپنے اہم ترین حلیف ملک اسرائیل کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے اپنی دیرینہ حکمت عملی میں کسی حد تک تبدیلی لا رہا ہے۔ واشنگٹن کے نئے موقف میں یہ بہت لطیف تبدیلی بڑی محتاط اور نپی تُلی نظر آ رہی ہے۔

default

باراک اوباما نے برسر اقتدار آنے کے بعد اسرائیل فلسطین تنازعہ کے حل پر زور دیا

کئی تجزیہ نگار اسے گزشتہ کئی برسوں کے دوران امریکی اسرائیلی روابط میں نظر آنے والے شدید ترین بحران سے تعبیر کر رہے ہیں۔ خاص طور سے صدر باراک اوباما کے بر سر اقتدار آنے کے بعد سے واضح طور پر یہ تاثر مل رہا ہے کہ امریکہ اب اقوام متحدہ میں اٹھائے جانے والے ہر معاملے میں اسرائیل کی اندھا دھند تائید و حمایت نہیں کرے گا۔ بالخصوص ایک ایسے وقت پر جب اسرائیل کو عالمی سطح پر مسلسل تنقید اور مذمت کا سامنا ہے۔

Israel, Solidaritätsflotte, Gaza, NO FLASH

فلوٹیلا پر اسرائیلی کمانڈوز کے حملوں کے بعد سے تل ابیب حکومت کو عالمی تنقید کا سامنا ہے

باراک اوباما کی قیادت میں امریکہ کی یہ کوشش ہے کہ وہ تنارعہ مشرق وسطیٰ کے سلسلے میں ایک غیر جانبدار ثالث کی حیثیت سے اپنے کردار کو ایک بار پھر سے منوا سکے۔ اس بارے میں سابقہ امریکی حکومت پر تنقید کرنے والوں کا ماننا ہے کہ صدر جارج ڈبلیو بُش کے دور میں امریکہ کی اس ساکھ کو بہت دھچکہ لگا تھا۔

واشنگٹن کے ایک تھنک ٹینک Carnegie Endowment for International Peace کے مشرق وسطیٰ کے لئے پروگرام کی ڈائریکٹر مارینا اوٹاوے کے بقول بُش دور میں اسرائیل کو امریکہ کی غیر مشروط تائید و حمایت کی عادت پڑ گئی تھی۔ ان کا کہنا ہے: ’’صدر بُش کا اسرائیل سے متعلق موقف انتہاپسندی کی حد تک جانبدار تھا، جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ اسرائیلی کابینہ اور وزیر اعظم نیتن یاہو کو اُن کی پالیسیوں پر کی جانے والی ہلکی پھلکی تنقید بھی نہایت گراں گزرتی ہے۔ امریکہ کی مسلسل یہ کوشش ہوتی ہے کہ اقوام متحدہ کوئی ایسا پلیٹ فارم نہ بنے، جسے اسرائیل پر لعنت ملامت کے لئے استعمال کیا جائے۔‘‘

George Bush Ehud Olmert Jerusalem Nahost

سابق امریکی صدر جارج بُش کے دور میں اسرائیل کو واشنگٹن کی مکمل حمایت حاصل تھی

صدر اوباما ایران کے متنازعہ ایٹمی پروگرام کے خلاف تہران پر اقتصادی پابندیوں کے اقوام متحدہ کے چوتھے راؤنڈ کے لئے بھی ممکنہ زور لگا چکے ہیں اور غالباً سلامتی کونسل اس پر رواں ہفتے کوئی فیصلہ بھی کر لے گی۔ اسرائیل ایران کے جوہری پروگرام کو اپنے لئے بڑا خطرہ سمجھتا ہے۔ مارینا اوٹاوے کے مطابق اس اعتبار سے دیکھا جائے تو امریکہ کی اسرائیل سے متعلق پالیسیوں میں کوئی بہت بڑی تبدیلی نہیں آئی تاہم واشنگٹن اور تل ابیب کے مابین تعلقات غیر معمولی طور پر تناؤ کا شکار اس لئے نظر آ رہے ہیں کہ اسرائیل کا رد عمل بہت زیادہ غیر متناسب ہے۔

Ahmadinejad mit Uran Zentrifugen

ایران کے متنازعہ ایٹمی پروگرام کے بارے میں اوباما انتظامیہ کا موقف اٹل ہے

گزشتہ ہفتے غزہ کے عوام کے لئے امدادی اشیاء لے جانے والے بحری قافلے پر اسرائیلی دستوں کا کمانڈو ایکشن، جس کے نتیجے میں نو ترک باشندے ہلاک ہوئے تھے، کے خلاف اقوام متحدہ نے بیان دیا تھا اورامریکہ نے اس بیان کی تائید کی تھی۔ اس بیان میں اسرائیلی کارروائی کے نتیجے میں انسانی جانوں کے ضیاع پر افسوس کا اظہار کیا گیا تھا۔ ساتھ اس معاملے کی فوری، غیرجانبدارانہ، قابل بھروسہ اور شفاف چھان بین کرانے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ایک ایسی تفتیشی کارروائی کا مطالبہ جو عالمی معیار پر پورا اترے۔ اس پر واشنگٹن اوراقوام متحدہ کے سفارتکاروں سمیت امریکی اہلکاروں نے تمام تر کوششں کی کہ 15 رُکنی سلامتی کونسل آزادانہ تفتیش یا چھان بین پر زور نہ دے اور یہ کہ اُن واقعات کی وجہ سے سلامتی کونسل کی طرف سے اسرائیل کو علیحدہ سے تنقید کا نشانہ نہ بنایا جائے۔

رپورٹ کشور مصطفیٰ / خبر رساں ایجنسی

ادارت مقبول ملک