امریکا میں مزید پرائمریاں: ٹرمپ اور کلنٹن کو پھر سبقت | حالات حاضرہ | DW | 16.03.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکا میں مزید پرائمریاں: ٹرمپ اور کلنٹن کو پھر سبقت

امریکی صدارتی امیدوار بننےکی دوڑ میں ری پبلکن پارٹی کے سرکردہ سیاستدان ڈونلڈ ٹرمپ نے تین مزید ریاستوں میں کامیابی حاصل کی ہے اور اپنے ایک بڑے حریف مارکو روبیو کو صدارتی دوڑ سے باہر کر دیا ہے۔ کلنٹن کو بھی سبقت حاصل ہے۔

USA Vorwahlen in Florida Donald Trump in West Palm Beach

ری پبلکن پارٹی کے سرکردہ سیاستدان ڈونلڈ ٹرمپ فلوریڈا میں کامیابی کے بعد اپنے حامیوں کے ہمراہ خوشی کا اظہار کر رہے ہیں

نیویارک سے تعلق رکھنے والے 69 سالہ ارب پتی ڈونلڈ ٹرمپ کو اہم ریاست اوہائیو میں البتہ شکست اٹھانا پڑی ہے۔ وہاں کی پرائمری اوہائیو کے گورنر جان کَیسِک نے جیت لی۔ یہ پہلی پرائمری تھی، جس میں کَیسِک کو کامیابی ملی۔ اس طرح اب ری پبلکن پارٹی میں 63 سالہ کَیسِک اور 45 سالہ ٹَیڈ کروز کی صورت میں ٹرمپ کے محض دو حریف میدان میں باقی رہ گئے ہیں۔

اوہائیو میں ٹرمپ کی شکست سے ری پبلکن پارٹی کے اندر موجود اُس ابتری میں مزید شدت آ گئی ہے، جو ٹرمپ کی پَے در پَے کامیابیوں کی صورت میں پارٹی کے اندر پیدا ہو چکی ہے۔ ٹرمپ کے لیے مثبت بات یہ ہے کہ انہیں اب مزید محض دو مخالفین کا سامنا کرنا پڑے گا۔ سینیٹر مارکو روبیو نے اپنی آبائی ریاست فلوریڈا میں واضح شکست کے بعد وائٹ ہاؤس تک پہنچنے کی کوشش سے دستبردار ہونے کا اعلان کر دیا ہے۔ ٹرمپ کو ریاستوں الینوئے اور نارتھ کیرولینا میں بھی کامیابی ملی ہے۔

جہاں ری پبلکن پارٹی میں صدارتی امیدوار کی ریس میں اُتار چڑھاؤ نظر آ رہا ہے، وہاں ڈیموکریٹک پارٹی میں 68 سالہ ہلیری کلنٹن صدارتی امیدوار بننے کی منزل کے زیادہ سے زیادہ قریب پہنچ گئی ہیں۔ اُنہوں نے فلوریڈا، الینوئے، اوہائیو اور نارتھ کیرولینا میں اپنے حریف 74 سالہ بیرنی سینڈرز کو شکست سے دوچار کیا۔ کلنٹن کی ان کامیابیوں کے بعد لگتا ہے کہ اب امریکی سینیٹر بیرنی سینڈرز کے لیے کلنٹن کو ڈیموکریٹک پارٹی کی جانب سے صدارتی امیدوار بننے سے روکنا بہت مشکل ہو گا۔ کلنٹن اب زیادہ سے زیادہ یقین کے ساتھ یہ کہنے لگی ہیں کہ وہ آٹھ نومبر کو منعقدہ انتخابات میں ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دے کر پہلی خاتون امریکی صدر منتخب ہو جائیں گی۔

دوسری طرف فلوریڈا، الینوئے اور نارتھ کیرولینا میں کامیابی حاصل کرتے ہوئے ٹرمپ بھی مجموعی طور پر 1237 ووٹ حاصل کرنے کی منزل کے قریب پہنچ گئے ہیں، جو صدارتی امیدوار کے طور پر اپنی جماعت کی نامزدگی حاصل کرنے کے لیے ضروری ہیں۔ ابھی مزید گیارہ سو مندوبین کے ووٹ باقی ہیں، جن میں سے ٹرمپ کو اپنی یقینی نامزدگی کے لیے تقریباً 54 فیصد ووٹ بہر صورت لینا پڑیں گے۔

USA Vorwahlen in Florida Hillary Clinton in West Palm Beach

کلنٹن اب زیادہ سے زیادہ یقین کے ساتھ یہ کہنے لگی ہیں کہ وہ آٹھ نومبر کو منعقدہ انتخابات میں ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دے کر پہلی خاتون امریکی صدر منتخب ہو جائیں گی

یہ اور بات ہے کہ ٹرمپ کی ری پبلکن پارٹی کے اندر ابھی بھی بہت سے عناصر یہ نہیں چاہتے کہ اپنی اشتعال انگیز تقاریر کے لیے مشہور ٹرمپ آٹھ نومبر کو مجوزہ صدارتی انتخابات میں ری پبلکن پارٹی کی جانب سے اس عہدے کے لیے امیدوار بنیں۔ ٹرمپ اپنی تقاریر میں دیگر متنازعہ باتوں کے ساتھ ساتھ یہ بھی کہہ چکے ہیں کہ صدر بننے کی صورت میں وہ امریکا میں غیر قانونی طور پر مقیم گیارہ ملین تارکینِ وطن کو ملک سے نکال دیں گے، مسلمانوں کے امریکا میں داخلے پر عارضی پابندی عائد کر دیں گے اور میکسیکو کے ساتھ ملنے والی سرحد پر دیوار تعمیر کر دیں گے۔