1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکا جانے والے مسافروں کی سکیورٹی نگرانی مزید سخت

امریکی حکومتی ادارے کی ہدایت پر امریکا کا سفر کرنے والے مسافروں کی اسکریننگ مزید سخت کر دی گئی ہے۔ اس فیصلے کا اطلاق آج جمعرات چھبیس اکتوبر سے ہو گیا ہے۔

امریکا کے ٹرانسپورٹیشن سکیورٹی ایڈمنسٹریشن کے اعلان کے مطابق امریکا کا سفر کرنے والے مسافروں کو زیادہ سخت تلاشی اور اسکریننگ کا سامنا کرنا ہو گا۔ امریکی ادارے نے بین الاقوامی  فضائی کمپنیوں کو اس فیصلے سے آگاہ کر دیا ہے۔

بین الاقوامی فضائی کمپنیاں اب مسافروں کو جہاز پر سوار کرنے سے قبل اُن کے ڈیجیٹل اور الیکٹرانک اشیا و ڈیوائسز کی اسکریننگ کو مزید سخت کریں گی۔ اس کے علاوہ پرواز سے قبل ہوائی جہاز کے گرد اضافی سکیورٹی کی تعیناتی بھی شامل ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ہوائی اڈے کے اندر مسافر لاؤنجز میں سکیورٹی اہلکاروں کو تعینات کرنے کی ہدایت بھی جاری کی گئی ہے۔

امریکی ایئرپورٹس پر سکیورٹی، بھارتی سفارت کار بھی متاثر

امریکا جانے والی پروازوں کی سکیورٹی سخت

کیا ہوائی اڈوں کا مکمل تحفظ تقریباﹰ ناممکن ہے؟

میونخ ائرپورٹ پر سکیورٹی ڈرامے کا سبب غلط الارم

ٹرانسپورٹ سکیورٹی کے امریکی ادارے کا کہنا ہے کہ ان اقدامات کا مقصد بین الاقوامی پروازوں کی سکیورٹی کو بہتر بنانا ہے تا کہ آخری وقت تک امریکا جانے والی پرواز محفوظ رہے۔ یہ اقدامات رواں برس اسی ادارے کے اُس فیصلے کے تحت ہیں، جس میں کہا گیا تھا کہ مسافروں کی تلاشی و جانچ پڑتال کا عمل جلد سخت کر دیا جائے گا۔

تجزیہ کار امریکی حکومت کے سکیورٹی اور نگرانی سے متعلق ان نئے ضوابط کو مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقی ملکوں کے بعض ہوائی اڈوں پر سامان کی اسکریننگ کی بڑی مشینیں ہٹانے کا نتیجہ بھی قرار دے رہے ہیں۔

Frankreich - Flüchtlinge erreichen Flughafen nach Umsiedlung von Athen (Getty Images/AFP/R. Lafabregue)

امریکا جانے والی انٹرنیشنل پروازوں کے مسافروں کی اسکریننگ میں اضافہ کر دیا گیا ہے

دوسری جانب انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن نے امریکی فیصلے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہوابازی کی سکیورٹی پر امریکی فیصلے سے مزید بوجھ بڑھے گا۔ عالمی ایسوسی ایشن کے ترجمان پیری فلنٹ کے مطابق نئے فیصلوں کے نفاذ سے ہوائی اڈوں پر کام میں اضافہ ہو گا۔

یہ بھی کہا گیا کہ امریکی ٹرانسپورٹ سکیورٹی کے ادارے کو اس سلسلے میں قدرے لچک کا بھی مظاہرہ کرنا ہو گا تا کہ پروازوں کے نظام میں تسلسل رہے اور مسافروں کو زیادہ پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ فلنٹ نے یہ بھی کہا کہ مستقبل میں ہوابازی کے شعبے میں خطرات کو کم سے کم کرنے کی پالیسی اور اقدامات کو متعارف کرنا ضروری ہو گا۔

DW.COM